Circle Image

ع۔ن مانؔی

@Emmanuel

اُس کی دُعا میں اِتنا اثر دیکھنے کے بعد
دل شادماں ہے اپنا یہ گھر دیکھنے کے بعد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنچھی بھی جا چکے ہیں اسے چھوڑ کر کہیں
سوکھا ہوا یہ جڑ سے شجر دیکھنے کے بعد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

4
ہر شخص کو زمیں میں اترنا ہے آخرش
اے موت ہم کو تجھ سے گزرنا ہے آخرش
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر چیز اس جہان کی فانی ہے دوستو
ہر چیز نے ہی رنگ بدلنا ہے آخرش
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

7
دیکھا ہے جب سے موت کو مَیں نے قریب سے
الفت مزید بڑھ گئی میری صلیب سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسا بھی کوئی ڈھونڈ کے لانا پڑے گا اب
شکوہ نہیں ہو کوئی بھی جس کو رقیب سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
7
اُٹھا کے ہاتھ ترے واسطے دعا کرتا
اے شاہِ وقت اگر تُو کوئی بھلا کرتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ایک پھُول تھا اور میں اُسی کی خوشبو تھا
خدا ہمیں نہ کبھی اس طرح جدا کرتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
3
دھواں ہے شور ہے وحشت ہے ان ہواؤں میں
اثر رہا ہی نہیں اب مری دعاؤں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر ایک ماں میں مجھے ماں دکھائی دیتی ہے
خدا نے ڈالی ہے ممتا تمام ماؤں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔

8
وہ میری سانسیں بحال کرتا
کبھی تو آ کر وِصال کرتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خُوشی کے پل بانٹتا وہ آ کر
نہ غم سے مجھ کو نڈھال کرتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
6
ثبوت سارے مٹا ہی دے گا
خطوط اک دن جلا ہی دے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
طبیب بن کر جو آ گیا ہے
ہے سب کا شافی شفا ہی دے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
5
غموں کی دھوپ میں سر پر ہے سایہ
جبھی تو پیڑ آنگن میں لگایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترا ہر غم مجھے پہچانتا ہے
مرا اپنا ہے کب ہے وہ پرایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
4
کہاں کوئی وعدہ نبھاتے ہو تم بھی
ہمیں گول چکر گھماتے ہو تم بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔ ۔۔۔۔۔
بڑی دیر تک میں اکیلا ہوں رہتا
بڑی دیر کے بعد آتے ہو تم بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔ ۔۔۔۔۔

0
5
جو بدلا یہ لہجہ تمہارا ہوا ہے
خسارہ تو اس میں ہمارا ہوا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی تو چمکنے لگی ہے یہ دنیا
ابھی اپنا روشن ستارہ ہوا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
5
مجھے اک دن پکارے گی محبّت
مقدر کو سنوارے گی محبّت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فلک پر بھی بٹھایا ہے اِسی نے
لحد میں بھی اُتارے گی محبّت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
3
اپنی ہستی کو ایسے سنواروں گا مَیں
ایک مشکل سے خود کو گزاروں گا مَیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لوٹ کر مجھ کو جانا ہے اُس کی طرف
اپنے رب کو ہمیشہ پکاروں گا مَیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
3
بے سہاروں کو اِک آسرا مل گیا
تیرے آنے سے کچھ حوصلہ مل گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی پھر اُسی موڑ پر آ گئی
آج رستے میں وہ بے وفا مِل گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
4
کیا پڑی تھی میں اُسے صرف اشارہ کرتا
نام لے کر میں اُسے کیوں نہ پکارا کرتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس لئے تُجھ سے کِنارہ ہی مجھے کرنا تھا
کب تلک تیری محبت میں خسارہ کرتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
5
لوٹ جاؤں گا مرا جس دن ارادہ بن گیا
وہ مرا اپنا یہاں کچھ حد سے زیادہ بن گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دونوں ہاتھوں سے یتیموں کی مدد کرتا ہوں میں
نعمتیں اتنی ملی ہیں دل کشادہ بن گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
4
باندھا ہوا ہے جیسے دیے کو ہوا کے ساتھ
کاٹوں میں عمر کیسے بھلا بے وفا کے ساتھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک ڈوبتے ہوئے کا سہارا بنے ہو آپ
منزل مِلے گی آپ کو میری دُعا کے ساتھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
4
اِک نظر اُس نے مُجھ پہ ڈالی ہے
آنکھ اب تک مری سوالی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اِس طرف اب کہاں وہ آتا ہے
اُس نے بستی نئی بنا لی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
3
ترا درد راہوں میں رکھتا ہے مجھ کو
زمانہ نگاہوں میں رکھتا ہے مجھ کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مَیں ہوں خاکساروں میں رہنے کے قابل
وہ مالِک ہے شاہوں میں رکھتا ہے مُجھ کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
4
موڑ آیا ہے اب کہانی میں
شہر ڈوبا ہوا ہے پانی میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لوگ دولت سے پیار کرتے ہیں
مَیں نے دیکھا ہے زندگانی میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

7
دُور تک جب دھواں دکھائی دے
صاف سب کچھ کہاں دکھائی دے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرگی اس قدر ہے آنکھوں میں
اے خدا آسماں دکھائی دے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
11
وہ چاند چہرہ بھی اک آفتاب ہوتا تھا
ہمیشہ ہاتھ میں جس کے گلاب ہوتا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُسی گلاب سے چہرے کو ڈھونڈتا ہوں مَیں
کہ جس کے چہرے پہ کالا نقاب ہوتا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
3
اب تہہِ خاک ڈھونڈھتا ہے مجھے
ایک نمناک ڈھونڈتا ہے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب تلک خاک اڑ رہی ہے مری
اب تلک چاک ڈھونڈھتا ہے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

8
مجھے جس کی ضرورت ہے
وہ خوشبو ہے محبت ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سمجھ میں یہ نہیں آتا
دِلوں میں کیوں کدورت ہے ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
7
وہ ایسا وار کرنا چاہتا ہے
مجھے مسمار کرنا چاہتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اُس کی آنکھ میں لکھا ہوا ہے
وہ مجھ سے پیار کرنا چاہتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

2
21
مرے پیچھے اگر لشکر نہیں ہے
عدو کا پھر بھی کوئی ڈر نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی رختِ سفر مت باندھیے گا
نہیں یہ فیصلہ بہتر نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

7
اُس کی یادوں سے مجھے جی کو لگانا ہو گا
رفتہ رفتہ ہی سہی اس کو بھلانا ہو گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا لہجہ وہ مرے لفظ چرا سکتا ہے
اس کی نظروں سے خزانے کو چھپانا ہو گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
4
ترے سلوک سے لگتا ہے مَیں پرایا ہوں
وگرنہ مَیں تو ترا عکس تیرا سایہ ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اڑائے رکھا مجھے چار دن محبت نے
مَیں گھوم پھر کے دوبارہ وہیں پہ آیا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
5
یادیں ہیں دفن نیچے ملبہ نکالئے
ذہنوں میں جو بھرا ہے کچرا نکالئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کرتے ہیں یاد مل کے ماضی کو اپنے ہم
بچپن کی یادوں کا پھر بستہ نکالئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
5
عدو سے لڑائی میں ہارا نہیں تھا
مجھے میرے ڈر نے جو مارا نہیں تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وگرنہ یہ بستی نہ بہتی ندی میں
کِسی نے بھی اس کو پکارا نہیں تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
4
شہر سنسان ہو گیا ہو گا
کتنا نقصان ہو گیا ہو گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب کے لہجوں میں اس طرح گُھل کر
سب کی پہچان ہو گیا ہو گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

6
درد میں دیکھ کر مسکراتے ہو تم
درد لازم ہے کیوں بھول جاتے ہو تم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غیب سے آ کے کرتا ہے کوئی مدد
جب بھی مشکل میں یوں لڑکھڑاتے ہو تم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
5
اُس کی جانب قدم میں بڑھانے لگا
رفتہ رفتہ مرا دل ٹھکانے لگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک نئی روشنی کی تمنا لئے
خواب آنکھوں میں اِک جِھلملانے لگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
9
درد کا فیصلہ بدلنا ہے
ہجر کا سلسلہ بدلنا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مشکلیں سر سے ٹلنے والی ہیں
بس ذرا حوصلہ بدلنا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
8
تیرے غم سے مجھے رہا نہ کرے
میرے حق میں کوئی دُعا نہ کرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دُور کر دے مُجھے جو اپنوں سے
ایسی دولت خُدا عطا نہ کرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
5
خیالوں سے ترے دل کو رہا ہونے نہیں دیتا
کہانی سے تری خود کو جدا ہونے نہیں دیتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یقیں کی آخری حد تک مجھے تم سے محبت ہے
خدا سچی محبت کو جدا ہونے نہیں دیتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
9
عشق میں کچھ بھی اب عجب نہ لگے
چوٹ دل پر یہ بےسبب نہ لگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک عجب خوف گھیر لے یہ مجھے
کیا کروں دل کہیں پہ جب نہ لگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
8
اندھیرے چیر کے آؤ ضیا تلاش کریں
کہ اپنے دل میں ہمیشہ خدا تلاش کریں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ سوچتے ہیں کہ اب ڈھونڈنا ہے کس کو ہمیں
یہ سوچتے ہیں کہ ہم لوگ کیا تلاش کریں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
12
یہ رنج پوچھ تُو جاں سے گزرنے والے سے
اُداسی روٹھ گئی ہے سنورنے والے سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارا رزق اُسی نے تلاش کرنا ہے
امیدیں سب کی ہیں گھر سے نکلنے والے سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
7
کسی طرح میں ترا جاں نثار ہو نہ سکا
اے میری زیست مجھے تجھ سے پیار ہو نہ سکا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو کہہ رہا تھا گزاریں گے ساتھ عمر یہاں
ذرا بھی اس سے مرا انتظار ہو نہ سکا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
9
گیت الفت کا زمانے کو سنایا ہے یہاں
ہم نے اپنی خواہشوں کا خوں بہایا ہے یہاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ دانائی کی باتیں کر رہے ہیں کیوں بھلا
دشت زادوں کو بھی الفت نے نچایا ہے یہاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
9
جب سے گئے ہو آنکھ مری اشکبار ہے
یعنی تمہارے ہجر میں دل بے قرار ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
موسم تمہارے رنج کا اچھا لگا مجھے
شعر و سخن کے واسطے یہ سازگار ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
8
سمندر پار کے بارے میں مجھ کو
بتاؤ یار کے بارے میں مجھ کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ضرورت ہی نہیں ہے پوچھنے کی
مرے معیار کے بارے میں مجھ کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
9
اب خفا بے سبب نہیں ہوتے
یہ تماشے تو اب نہیں ہوتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم سے پھر شاعری نہیں ہوتی
ذہن میں چشم و لب نہیں ہوتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

1
40
آشیانہ بہت ضروری ہے
اک ٹھکانہ بہت ضروری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب تمہیں کس طرح بتاؤں مَیں
گھر پرانا بہت ضروری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

1
26
مجھ سے کہانی اپنی چھپائی نہ جا سکی
بس آسماں تلک یہ دہائی نہ جا سکی
----------------------------------------------
کوشش کے باوجود چراغاں نہ ہو سکا
تیرے بغیر بزم جمائی نہ جا سکی
----------------------------------------------

23
میں جہاں پر ہوں وہاں بہتر ہوں مَیں
یار اس کی روح کے اندر ہوں مَیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں کبھی تھا موم کا پتلا مگر
چھو کے مجھ کو دیکھ لے پتھر ہوں مَیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

16
ہمارے راستے سے آپ ہٹتے کیوں نہیں ہیں
اڑے ہیں ایک ہی ضد پر پگھلتے کیوں نہیں ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔
ہمارا دل بجھا رہتا ہے اس پر کیا کہیں گے
دئے آنکھوں میں جانے اب یہ جلتے کیوں نہیں ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔

0
16
زندگی پھول ہے اور پھول بکھر جانا ہے
خاک نے خاک میں اک روز اتر جانا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں مسافر ہوں مرا کوئی ٹھکانہ ہی نہیں
تیری دنیا سے مجھے دیکھ گزر جانا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
20
شاعری پر غرور تھوڑی ہے
دل یہ شاعر حضور تھوڑی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ نہ کچھ پیار تو اُسے بھی تھا
صرف میرا قصور تھوڑی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
19
زندگانی کے چکر میں پڑ جاؤ گے
رائیگانی کے چکر میں پڑ جاؤ گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عشق کی نوکری جب کرو گے تو پھر
خوش گمانی کے چکر میں پڑ جاؤ گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
13
دیکھ آنکھوں میں ڈال کر آنکھیں
روشنی سے بحال کر آنکھیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک صورت فقط نظر آئی
جب بھی دیکھیں اچھال کر آنکھیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
19
مَیں سو رہا تھا تو کیا ہوا وہ خدارا مجھ کو جگا کے جاتا
کہ اُس نے واپس نہیں تھا آنا یہ بات مجھ کو بتا کے جاتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اِسی کے صدقے خدا نے اُس کی ہر ایک خواہش تھی کرنی پوری
خدا کے در پر وہ آگیا تھا تو اشک اپنے بہا کے جاتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
19
عِشق میں تنہائیاں ہیں اور کیا
دوستو رُسوائیاں ہیں اور کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ جو اپنی مُشکلیں ہیں ہم سفر
وقت کی انگڑائیاں ہیں اور کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
10
بن ترے بعد میں پھر جیا ہی کہاں
سانس سُکھ کا ابھی تک لیا ہی کہاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی اپنا مجھے چھوڑ کر جائے کیوں
زہر غم کا ہے مَیں نے پیا ہی کہاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
14
چراغِ زیست تمنائے دل جلا نہ کرے
اسے کہو کہ چرا کر نظر ملا نہ کرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوا میں تیر اچھالے ہیں دشمنوں نے بہت
کوئی بھی بھول کے طائر ابھی رہا نہ کرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
13
دیا تھا روشنی تھا
وہ میری آگہی تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے درمیاں کیوں
تعلق کاغذی تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
17
رگ و پے میں اذیت دوڑتی ہے
مری مُشکل میاں کافی بڑی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی انجان ہیں اک دوسرے سے
ابھی اپنی محبت بھی نئی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
17
دِکھائی کیوں نہیں دیتا نشاں ہوتے ہوئے بھی
نہیں ہوتا بیاں مَیں اب بیاں ہوتے ہوئے بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کس نے روک رکّھا ہے تُجھے سچ بولنے سے
تو کیوں خاموش بیٹھا ہے زباں ہوتے ہوئے بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
16
مسکراتا ہے مرے غم پہ جہاں ملتا ہے
دل پہ یادوں کا اگر کوئی نشاں ملتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میَں بھی بھٹکی ہوئی یادوں کی کوئی گرد ہوں اور
وہ بھی گزرا ہوا موسم ہے کہاں ملتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
13
آرام کر رہے ہیں جگانے کا اب نہیں
جو بجھ گئے چراغ جلانے کا اب نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر بار کیوں کریں بھلا اپنی انا کو زیر
ناراض ہیں تو ہوں وہ منانے کا اب نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
19
کیا ہوا آج کل آپ ملتے نہیں
محفلِ دوستاں میں بھی دِکھتے نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے وعدے کے ہیں یار پکے بہت
کر کے وعدہ کبھی ہم مُکرتے نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
18
اک دوجے کا درد سہیں گے ہم دونوں
ہر مُشکل میں ساتھ رہیں گے ہم دونوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خواب بُنیں گے اپنی اپنی مرضی کے
تصویروں میں رنگ بھریں گے ہم دونوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

26
مُسکرانے کے لئے ہر غم چھپانا پڑ گیا
بوجھ چھوٹی عُمر میں سب کا اُٹھانا پڑ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آب و دانہ آدمی کو کھینچ لیتا ہے میاں
دیس اپنا چھوڑ کر پردیس جانا پڑ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

19
یہ داستاں تو ہے اک رنجِ نارسائی کی
وفا کے نام پہ لوگوں نے بے وفائی کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چراغ، چاند، ستاروں کو روشنی دے کر
خُدا نے سارے جہاں میں ہے روشنائی کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
22
روشن کسی بھی طور ستارہ ہوا نہیں
رنج و الم سے دوست کنارہ ہوا نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا خاک آسماں سے اتاری نہیں گئی ؟
کیا رزق آسماں سے اتارا ہوا نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
16
وصل کا انتظار کرتے ہوئے
عُمر گزری ہے پیار کرتے ہوئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوصلہ چاہیے چٹانوں سا
غم کے دریا کو پار کرتے ہوئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
28
بول بالا کرو سخاوت کا
درس دیتے ہو کیوں عداوت کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جھیل میں زہر کیوں ملایا گیا
اب چلا ہے پتہ حقیقت کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
29
عمر کی دوڑ گرچہ پوری ہے
اِک کہانی مگر اُدھوری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خامشی چھین لے نہ گویائی
بات کرنی بہت ضروری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
51
پیٹ کی بھوک کو مِٹانے میں
عقل رہتی نہیں ٹھکانے میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اِک شکاری کی آنکھ بھر آئی
دیکھ کر فاختہ نشانے میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
28
نام لیتا نہیں ہے بھرنے کا
زخم شاید نہیں ہے سلنے کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مُفلسی آئنے میں جھانکتی ہے
اِس کو بھی شوق ہے سنورنے کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
17
مرا پیچھا جو کرتی تھیں دُعائیں یاد آتی ہیں
مُحبّت میں سبھی گُندھی صدائیں یاد آتی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خدارا بس کرو لڑنا نہ کھیلو خون کی ہولی
وہ جن کے چِھن گئے بچے وہ مائیں یاد آتی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
17
یہ تنی سی جو شام رہتی ہے
ایک خواہش غلام رہتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک خاموش سی تری فوٹو
مجھ سے محوِ کلام رہتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
20
یہ محبت کی تھوڑی سی مقدار تھی
زندگی اس سے آگے کی حقدار تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا مرنا تو بنتا تھا جانِ غزل
تیری آنکھوں کی دو دھاری تلوار تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
16
کہ جگنو کی طرح تیری محبت ٹمٹماتی ہے
مَیں رستہ بھول جاؤں تو مجھے رستہ دکھاتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مُجھے برباد حالوں نے بتایا دشت میں آ کر
سلیقہ زندگی کا تو یہ دنیا ہی سکھاتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
23
جو مُقدّر میں تھا وہی پایا
میرے حصّے میں مَیں نہیں آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رقص طائر ہوا میں کرنے لگا
جھیل میں عکس جب نظر آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

31
تیرے در پر کھڑا جو سائل ہے
اُس کے دِل کا پرندہ گھائل ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خامشی کی زباں سمجھتا ہے
دل عجب گفتگو کا قائل ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
25
دل کے بھیدوں کو کوئی سمجھا ہے
یہ سمندر بہت ہی گہرا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جِن کی آنکھوں کا خواب ٹُوٹا ہو
اُن کا لہجہ اُداس ہوتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

22
وہ جو سیرت کمال دیتا ہے
حُسن بھی بے مثال دیتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُس کا ہلکا سا مسکرا دینا
کتنی مُشکِل میں ڈال دیتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
23
خواب میں زندگی گزاری ہے
اِس لئے آنکھ میں خُماری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خُوشبو رہتی ہے میرے کمرے میں
گھر میں پُھولوں کی اِک کیاری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
26
ختم ہونے لگی ہے تنہائی
آنکھ میری خوشی سے بھر آئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کم سنی میں تجھے محبت ہے
خوب ہو گی تری پذیرائی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

26
شخص ایسا کوئی نہیں مِلتا
جو مرے ساتھ دو قدم چلتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُس سے بچھڑے تو اک زمانہ ہوا
زخم جانے یہ کیوں نہیں بھرتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
32
روشنی کے سوا اور کیا چاہیے
کوزہ گر بس مجھے اک دیا چاہیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سانس لینے میں دقت نہ ہو ایک پل
غم کے ماروں کو ایسی جگہ چاہیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

1
41
غزل
روتا ہے کس لئے اے مرے دل مجھے بتا
ملتا کہاں ہے سب کو یہاں پیار کا صلہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مُشکِل بڑا تھا ہجر کے رستوں کو ناپنا
دریا نے خُودکُشی کی سمندر میں جا گِرا

1
35
جب زمیں پر دیے جلاتے ہیں
چاند تارے بھی مُسکراتے ہی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اِتنا کہنا تھا پیار ہے تُم سے
لفظ ترتیب بُھول جاتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
24
کبھی جنوب کبھی یہ شمال بخشا ہے
ہر اِک بشر کو ہی ہجر و وصال بخشا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمام شہر کی آنکھوں میں تم ہی رہتے ہو
تُمہیں خُدا نے غضب کا جمال بخشا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
25
مَیں سرِ مقتل لئے سر آ گیا
دیکھ کر دشمن مرا گھبرا گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عشق نے بخشا مجھے اتنا عروج
مَیں زمیں سے آسماں تک آ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
19
تیرے کہے پہ خود کو مَیں کیوں کر بناؤں گا
جو ہو سکا تو خود کو ہی بہتر بناؤں گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے بھروں گا چاشنی پھولوں میں پیار کی
مَیں تتلیوں کے بعد میں پھر پر بناؤں گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
24
رتجگوں کے عذاب لِکھ دینا
کوئی پُر درد خواب لِکھ دینا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ مُحبّت بھی اک عبادت ہے
اِس کو کارِ ثواب لِکھ دینا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
22
آئے ہو تم اچھالنے کے لئے
درد ہوتے ہیں پالنے کے لئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کتنے پتھر تراش ڈالے ہیں
ایک بت کو نکالنے کے لئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
25
حقیقت کچھ نہیں وہم و گماں ہے
یہاں تو عشق بھی زورِ بیاں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترے لوگوں پہ ٹُوٹی ہے قیامت
مرے مالک تو ایسے میں کہاں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
21
سانحہ جڑانوالہ
پہاڑ غم کے گِرا رہے ہیں
خدا کے گھر کو جلا رہے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ظلم ڈھاتے رہے ہیں پہلے
ہمیں ستاتے رہے ہیں پہلے

0
31
راس آئے گی بے گھری ہم کو
یہ سکھاتی ہے زندگی ہم کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اِن اندھیروں سے خوف مت کھانا
کہہ رہی ہے یہ روشنی ہم کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
30
مرے مالک خداوندا خدایا
سدا ہم پر رہے رحمت کا سایہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فلک سورج زمیں اور چاند تارے
بڑے دلکش ہیں یارب سب نظارے
نظر ہر ایک منظر میں تُو آیا

0
35
آنکھوں میں ہے پیار کا منظر
تصویرِ دل دار کا منظر
اب تو دیکھنے آتے ہیں سب
تیرے اس بیمار کا منظر
اک تصویر بناؤ ایسی
جس میں ہو دیوار کا منظر

0
32
تُجھ سے اتنا پیار کروں گا
اپنوں کو اغیار کروں گا
تیرے ساتھ رہوں گا ہر دم
ہر رستہ ہموار کروں گا
دِل کو کتنا چین مِلے گا
جب تیرا دیدار کروں گا

0
41
عشق سمندر گہرا ہے
مَیں نے ڈوب کے دیکھا ہے
بھیگ رہا ہے بارش میں
پھر بھی کوئی پیاسا ہے
اُس نے مُجھ کو چاہا ہے
مَیں نے اُس کو چاہا ہے

29
دَورِ ظلمت دیس سے جانے والا ہے
امن پرندہ پر پھیلانے والا ہے
بن جائے گا زینت مفلس ہونٹوں کی
وقت نیا اب گیت وہ گانے والا ہے
یہ بتلا دے یار کتابِ زیست میں کیا
حادثہ کوئی دل دہلانے والا ہے

0
48
تُو ہے میرا پیار یہ تجھ سے کہنا ہے
اے میرے دلدار یہ تجھ سے کہنا ہے
کتنی اچھی مورت دیکھ تراشی ہے
دیکھ اپنا شہکار یہ تجھ سے کہنا ہے
تیرے ساتھ اے وقت میں بھاگ نہیں سکتا
دھیمی ہے رفتار یہ تجھ سے کہنا ہے

0
47
تمام عُمر شبِ غم بُھلا نہیں سکتے
یہ بھاری ہجر کا پتّھر اُٹھا نہیں سکتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خُدا کے بعد تُجھے کِتنا پیار کرتے ہیں
یہ دِل کی بات کسی کو بتا نہیں سکتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
48
اُس نے ملنے آنا ہے
یہ بھی خواب سہانا ہے
اس کی آنکھوں سے مَیں نے
آج اک رنگ چرانا ہے
مَیں نے ذہن میں رکھنا ہے
اُس نے بُھول ہی جانا ہے

2
65
تمہاری آنکھ میں کھلتے گلاب دیکھے ہیں
تو خواب ہم نے بھی تازہ جناب دیکھے ہیں
امیرِ شہر کو اِس کی خبر کہاں کوئی
غریبِ شہر نے کتنے عذاب دیکھے ہیں
ہماری پیاس کی شدت ہے اس قدر یارو
کہ رات دشت میں ہم نے چناب دیکھے ہیں

242
تم ہی آنکھ کا تارا ہو
میرا پیار نظارہ ہو
چپکے چپکے روتا ہے
شاید درد کا مارا ہو
ہنستے ہنستے سہہ لوں گا
جتنا بھی دُکھ بھارا ہو

51
چار دِنوں کے میلے ہیں
لیکن بہت جھمیلے ہیں
ایک اداسی چھائی ہے
درد و غم کے ریلے ہیں
میٹھی باتیں کرتے ہیں
دوست مرے البیلے ہیں

0
37
عمر کا سورج ڈھلتا ہے
موت کا خوف بھی بڑھتا ہے
وقت ملے بتلاؤں گا
میرے دل میں کیا کیا ہے
مُجھ کو اچّھا لگتا ہے
اِس کا مطلب اچّھا ہے

0
38
فلک پر چاند تارے جاگتے ہیں
کہ شب بھر غم کے مارے جاگتے ہیں
ابھی تک دل تُجھے بُھولا نہیں ہے
ابھی تک زخم سارے جاگتے ہیں
وہ جب سے شہر میں آیا ہوا ہے
جِدھر دیکھوں نظارے جاگتے ہیں

0
43
بات پرانی یاد آتی ہے
پیار کہانی یاد آتی ہے
بیچ سمندر ڈوبتا سورج
شام سہانی یاد آتی ہے
جس نے کیا دیوانہ مجھ کو
وہ دیوانی یاد آتی ہے

0
65
دشت کہانی رہنے دو
بات پرانی رہنے دو
اِن یادوں کی گٹھڑی میں
شام سہانی رہنے دو
یاد کا دریا میٹھا ہے
آنکھ میں پانی رہنے دو

0
36
مرا دُشمن ستارا ہو رہا ہے
مُحبّت میں خسارہ ہو رہا ہے
مرے حالات کچھ بدلیں گے شاید
کہ خوابوں میں اِشارہ ہو رہا ہے
تمہیں دیکھے بنا ہے خاک جینا
بڑا مُشکِل گزارہ ہو رہا ہے

0
49
تُو ہے میری جان زمانہ کیا جانے
تُجھ پہ مَیں قربان زمانہ کیا جانے
سب کہتے ہیں میری آنکھیں ہنستی ہیں
لیکن دِل ویران زمانہ کیا جانے
تُجھ کو بُھول مَیں جاؤں دُنیا کہتی ہے
کب ہے یہ آسان زمانہ کیا جانے

0
57
پُھول ہیں جس کے ہاتھوں میں
خُوشبو اُس کی باتوں میں
دِن کو بے کل رہتا ہے
اور بے چین وہ راتوں میں
کر ہی ڈالی دِل کی بات
مًیں نے باتوں باتوں میں

89
تیرا میرا مِلنا مُشکل
پُھول کا باغ میں کِھلنا مُشکل
سچّا میں اِنسان ہوں لیکن
سچّی بات ہے لِکھنا مُشکل
اپنے دور کا سورج ہوں مَیں
میرا اب ہے ڈھلنا مُشکل

71
ہم جو مِلے ہیں ساون میں
لوگ جلے ہیں ساون میں
کتنے گہرے زخم تھے وہ
اب جو سِلے ہیں ساون میں
جیتی بازی پیار کی ہم
ہار چلے ہیں ساون میں

45
یوں سمجھو اوقات کی خاطر
ہم بدلے حالات کی خاطر
پتّھر دل بھی پگھلے دیکھے
آنکھوں میں برسات کی خاطر
شام کو میلہ لگتا ہے اب
میری تنہا ذات کی خاطر

60
مُجھے اِس غم کے دریا کا کِنارا ہی نہیںں مِلتا
کہ ڈُوبا اس طرح سے ہوں سہارا ہی نہیں ملتا
مُجھے اب آسمانوں کو بھی شاید کھوجنا ہوگا
جو اُس کی طرح سے چمکے سِتارا ہی نہیں مِلتا
مرے شعروں کو سمجھیں گے جہاں والے بھلا کیسے
یہاں تو دل لگی میں کوئی ہارا ہی نہیں ملتا

37
بخت تُونے ہمارے سنوارے وطن
میرے پیارے وطن میرے پیارے وطن
پُھول، خوشبو، ہوائیں یہ پربت سبھی
میری آنکھوں کے ہیں چاند تارے وطن
میرے پیارے وطن میرے پیارے وطن
تُجھ کو مل کے بنائیں گے جنت نُما

38
لوٹ کر آئے نہیں شہر سے جانے والے
جانے کس دیس میں جاتے ہیں نہ آنے والے
ہم نے ہر بار وفاؤں کی سزا پائی ہے
ہم نے دھوکے یہاں کھائے ہیں نہ کھانے والے
ہم نے اِس کارِ محبت میں قدم رکھا تھا
ہم وہ عاشق ہیں میاں دشت بسانے والے

0
2
86
اب بہکنے سے نہ روکے کوئی
بس تڑپنے سے نہ روکے کوئی
ہم اُڑانوں پہ یقیں رکھتے ہیں
ہم کو اڑنے سے نہ روکے کوئی
ہم نے مانگی تھی دعا بارش کی
اب برسنے سے نہ روکے کوئی

0
45
غریبِ شہر تو کب سے دہائی دیتا ہے
امیرِ شہر کو اونچا سنائی دیتا ہے
کہ تُجھ سے آگے مجھے کچھ نظر نہیں آتا
وہ میری آنکھ کو تُجھ تک رِسائی دیتا ہے
کسی کسی پہ ہی آتا ہے پیار اُس کو بھی
کسی کسی کو وہ ساری خُدائی دیتا ہے

0
59
سب دُنیا سے پیارا ہوں مَیں
تیری آنکھ کا تارا ہوں مَیں
ایسے دُنیا دیکھ رہی ہے
جیسے ایک نظارہ ہوں مَیں
اُس سے میری قیمت پوچھو
جِس کو جان سے پیارا ہوں مَیں

0
34
غم کے دریا کو پار کر لوں گا
مَیں ترا انتظار کر لوں گا
مَیں تری ایک مُسکراہٹ پر
زندگانی نثار کر لوں گا
عشق کو تُم خطا سمجھتے ہو
یہ خطا بار بار کر لوں گا

0
65
خواب اِک ہولناک دیکھا ہے
اِس لئے دل شدید دھڑکا ہے
تیری ہستی میں تیری مستی میں
زندگی کا سراغ پایا ہے
کِس نے ایسے کسی کو کب چاہا
جِس طرح میں نے تُجھ کو چاہا ہے

0
58
اے خُدا اب دِکھائی دے مجھ کو
درد و غم سے رہائی دے مُجھ کو
میری آنکھوں کو وہ بصارت دے
تیری صُورت دِکھائی دے مجھ کو
تُو چھپا کائنات میں ہے کہاں
تیری آہٹ سنائی دے مجھ کو

0
58
میرے دِل کے قریب تھا پہلے
کوئی میرا حبیب تھا پہلے
اپنے لفظوں سے اب وہ ڈرتا ہے
جو بظاہر ادیب تھا پہلے
دوستوں میں شُمار ہوتا ہے
جو کہ میرا رقیب تھا پہلے

0
63
پہلی بارش برسی ہے
دل کی مٹی مہکی ہے
میں نے ساون آنکھوں میں
پیار کی بدلی دیکھی ہے
چاند اترا ہے ندّی میں
ندّی نیند سے جاگی ہے

0
32
تمہیں مبارک تمام خوشیاں مَیں آج سب کچھ ہی ہار لوں گا
یہ چار دن ہیں جو زندگی کے بِنا تمہارے گزار لوں گا
مُجھے خبر ہے کہ تُو بھی مُجھ سے کرے محبّت بلا کی آخر
پڑی ضرورت تو جانِ جاناں مَیں نام تیرا پکار لوں گا
یہ لوگ سارے جہاں پہ جا کر پکارتے ہیں خدا کو اپنے
کہ مَیں بھی اپنا نصیب جا کر اُسی کے در پر سنوار لوں گا

0
41
تنہائی کا خوف ڈرانے لگتا ہے
جب وہ مُجھ سے ہاتھ چُھڑانے لگتا ہے
کالی راتیں تیز ہوائیں لاتی ہیں
جب بھی کوئی دیپ جلانے لگتا ہے
لگتا ہے یہ آنکھ کا دریا سُوکھے گا
اشکوں میں یہ ریت بہانے لگتا ہے

0
45
یہ قیامت کبھی بھی ڈھانا نہیں
مُجھ کو اے دوست بُھول جانا نہیں
رشتے کمزور پڑ گئے ہیں بہت
پہلے جیسا یہ اب زمانہ نہیں
مُجھ سے مِلنے نہیں وہ آیا آج
یاد اس کو کوئی بہانہ نہیں

0
32
مجھے وہ نئی اک ادا دے گیا
عجب زندگی کا مزا دے گیا
سفارت اجالوں کی سونپی مجھے
چراغوں کو میرا پتہ دے گیا
کبھی مثلِ خُوشبو معطر کیا
کبھی سرد رُت کی ہوا دے گیا

0
54
وہ خوش مزاج مری زندگی کا حِصّہ ہے
اسی لئے تو مرے آس پاس رہتا ہے
تمام شہر کی آنکھوں میں تم ہی رہتے ہو
خدا نے تم کو غضب کا جمال بخشا ہے
مَیں جانتا ہوں کے وہ شخص کتنا اچھا ہے
تو بات بات پہ جس کی مثال دیتا ہے

0
51
دوستوں کی دوستی
میں چُھپی ہے زندگی
کُچھ نظر آتا نہیں
اس قدر ہے تیرگی
دِل کے کونے میں کہیں
رہ گئی ہے ان کہی

0
53
آج بچھڑے جو ملنے والے ہیں
پھول شاخوں پہ کھلنے والے ہیں
جن کی تصویر میں بناتا ہوں
وہ تو چہرہ بدلنے والے ہیں
ظلمتِ شب ہماری بستی کے
آخری دیپ بُجھنے والے ہیں

0
52
ٹُوٹ کر اس طرح سے پیار نہ کر
جانے والے کا انتظار نہ کر
پُھول جیسا ہے دوست یہ جیون
زندگانی کو مِثلِ خار نہ کر
لوٹ بھی آ وفا کے رستے پر
موسمِ گُل کو بے قرار نہ کر

0
43
کِس کو کھونا ہے کس کو پانا ہے
زندگی بھی عجب فسانہ ہے
کون کر پائے گا مُجھے تسخیر
کِس نے دل میں اترتے جانا ہے
اب تو ہر پل ہی زخم سہنے ہیں
اب تو ہرپل ہی مُسکرانا ہے

0
256
ہم نے یہ بات آزمائی ہے
بے وفائی تو بے وفائی ہے
جھوٹ سچ کا گماں نہیں ہوتا
اس کی باتوں میں کیا صفائی ہے
دِل دھڑکنا ہی جیسے بّھول گیا
اُس نے ایسی خبر سنائی ہے

0
44
چاند سُورج اور ستارے ہاتھ میں
خواب میں دیکھے تمھارے ہاتھ میں
آنکھ رکھ آیا تری دہلیز پر
اور اُٹھا لایا نظارے ہاتھ میں
مَیں نے دیکھا ہے سمندر آنکھ میں
آنکھ سے بہتے ہیں دھارے ہاتھ میں

0
48
اکثر اپنا پیار جتانے آتا ہے
مَیں رُوٹھوں تو یار منانے آتا ہے
جو منزل اور رستے سے بے بہرہ ہو
وہ بھی مجھ کو راہ دکھانے آتا ہے
شہزادے کے بھیس میں کوئی راتوں کو
شہزادی کے خواب چُرانے آتا ہے

0
27
زندہ درد کہانی رکھنا
اپنی آنکھ میں پانی رکھنا
رکھنا مشکل آسانی میں
مشکل میں آسانی رکھنا
مُجھ سے نفرت کرنے والے
میرا پیار نِشانی رکھنا

0
57
میری سانسیں، اسی کی سانسیں ہیں
جس کی باتیں حسین باتیں ہیں
شور کرتی تھیں اس کے آنے پر
اب یہ خاموش سی جو راتیں ہیں
ڈور سانسوں کی اس کے ہاتھ میں ہے
جس کی بخشی ہوئی یہ سانسیں ہیں

0
66
جِن سے ہوتے ہیں رشتے سانسوں کے
سانپ ڈستے ہیں اُن کی باتوں کے
رزق تقسیم کرنے والے دیکھ
لوگ مارے ہوئے ہیں فاقوں کے
خامشی جس نے اوڑھ رکھی تھی
اب تو چرچے ہیں اس کی باتوں کے

0
60
بعد مدت کے مُسکراتے ہیں
درد و غم سے نِکل کے آتے ہیں
اِس سے پہلے کہ دیر ہو جائے
حالِ دل ہم اّسے سُناتے ہیں
آنکھ جب خواب دیکھتی ہے ترا
دل میں جگنو سے جھلملاتے ہیں

0
42
ہجر سے اس لئے نہیں ڈرتے
دید کی آرزو نہیں کرتے
اس قدر دوریاں نہیں اچھی
تم مرے ساتھ کیوں نہیں چلتے
لوگ ایسے بھی ہم نے دیکھے ہیں
جو کہ مر کر کبھی نہیں مرتے

0
44
کوئی اتنا برا نہیں ہوتا
وقت بس ایک سا نہیں ہوتا
پھر بھی اک راستہ تو ہوتا ہے
جب کوئی راستہ نہیں ہوتا
حادثوں کے سبب پہ غور کرو
بے سبب حادثہ نہیں ہوتا

0
51
اُلفتوں کے درمیاں
نفرتوں کے درمیاں
رو رہی ہیں خواہشیں
حسرتوں کے درمیاں
کُچھ مُسافِر ہیں پڑے
راستوں کے درمیاں

0
61
تُم کو دل میں ہے اتارا عمر بھر
ساتھ چاہوں گا تمہارا عمر بھر
اے خُدا مَیں اس کے آدھے پیار میں
اب کروں کیسے گزارا عمر بھر
وہ بہے دریا کے پانی کی طرح
مَیں رہوں اُس کا کِنارا عمر بھر

0
87
پیش ہر اک گام دلدل ہے مجھے
کیا بتاؤں کیسی مشِکل ہے مجھے
کیا جئیں گے فاقہ کش افلاس میں
بس یہی اک سوچ ہر پل ہے مجھے
ڈھونڈ لاؤں گا عِلاج تیرگی
عظمتِ انسان افضل ہے مجھے

0
60
خامشی بھی سُنائی دیتی ہے
جب وہ صُورت دِکھائی دیتی ہے
زندگی بھی تو اک قفس میں ہے
موت آ کر رہائی دیتی ہے
چاک پر مَیں دیے بناتا ہوں
روشنی رہنمائی دیتی ہے

0
63
مَیں قدموں میں پھیلا ہوں
تیرے گھر کا رستہ ہوں
ہے برہا کی دُھوپ کڑی
مَیں چھایا کو ترسا ہوں
خوف ہے تیز ہواؤں کا
میں اِک ٹوٹا پتہ ہوں

0
60
بات کرتے ہیں جو چراغوں پر
رشک آتا ہے ان کی باتوں پر
بھوک سے سامنا ہوا ہے کیا
تم بھی لکھنے لگے ہو فاقوں پر
کتنی چاہت سے اُس نے میرا نام
لِکھ لیا ہے حسین ہاتھوں پر

0
62
تُم بھی مِلتے ہو اجنبی کی طرح
یعنی تُم بھی ہو زندگی کی طرح
تیرگی ختم ہو گئی ساری
تُم نظر آئے روشنی کی طرح
میرے نغموں میں جان تم سے ہے
میرے ہونٹوں پہ ہو ہنسی کی طرح

0
67
بُجھتی آنکھوں کو خواب دیتی ہیں
مُجھ کو شامیں عذاب دیتی ہیں
پڑھنے والے کو بھانپ کر آنکھیں
راز اپنے جناب دیتی ہیں
جب مرا دل سوال کرتا ہے
اس کی آنکھیں جواب دیتی ہیں

0
62
جب نِکالے گئے کہانی سے
اشک بہنے لگے روانی سے
ایک ہی بوند پیاس ہو جس کی
کیا غرض اس کو بہتے پانی سے
تیری محفل میں روشنی ہے مگر
رنگ تھا دوستی پرانی سے

0
59
کب کسی کو مِلی بے وفا سے وفا
پھر بھی اچھی لگی بے وفا کی ادا
دل میں الفت کا جو بیج بویا گیا
دیکھ ساون میں وہ پُھول بن کر کِھلا
روشنی سے اسے بھی بڑا پیار ہے
اِس لئے رکھ دیا ہے جلا کر دیا

0
44
اپنی آنکھوں کے وار کرتی ہے
تیرگی بے قرار کرتی ہے
سانس کا تجربہ بتاتا ہے
موت حملے ہزار کرتی ہے
زندگی عشق بھی نشہ ہے کیا
کیوں خطا بار بار کرتی ہے

0
41
دِل سے تمہاری یاد کو مِٹنے نہیں دیا
ہم نے کسی بھی زخم کو بھرنے نہیں دیا
چھوڑا نہیں ہے ضبط کا دامن ابھی تلک
آنکھوں سے ایک اشک بھی گِرنے نہیں دیا
ماں کی دعائیں ساتھ ہمیشہ رہیں مرے
مجھ کو کبھی زمین پہ گرنے نہیں دیا

0
41
خُود سے مجھ کو گِلہ نہیں کوئی
گرچہ تُجھ سا مِلا نہیں کوئی
لاکھ کوشش کے باوجود میاں
زخمِ دِل ہی سِلا نہیں کوئی
یار اِس مطلبی زمانے میں
چاہتوں کا صِلہ نہیں کوئی

0
37
سِتارے بات کرتے ہیں
تو سارے بات کرتے ہیں
مَیں جب خاموش ہوتا ہوں
خسارے بات کرتے ہیں
اِشاروں کی زباں سمجھو
اِشارے بات کرتے ہیں

0
62
عہد و پیماں بدلتے دیکھے ہیں
کتنے اِنساں بدلتے دیکھے ہیں
ہر طرف ہو گئی زمیں بنجر
جب سے دہقاں بدلتے دیکھے ہیں
دوستو زندگی کے صدموں سے
ہم نے ایماں بدلتے دیکھے ہیں

0
59
دل میں اک دلدار ہے رکھا
ہر اک سانس میں پیار ہے رکھا
اک جانب ہے پیار کی دولت
اک جانب سنسار ہے رکھا
منزل بھی دشوار ہے اپنی
رستہ بھی دشوار ہے رکھا

0
54
خواب آنکھوں میں جو پروتے ہیں
منزلوں کے قریب ہوتے ہیں
بات نفرت کی جو نہیں کرتے
امن کے وہ نقیب ہوتے ہیں
عُمر گزری ہے دشت میں اُن کی
چین کی نیند اب جو سوتے ہیں

0
45
ہجر کے ساتھ ہاتھ ہو جائے
رنج و غم سے نجات ہو جائے
روشنی بانٹ دو زمانے میں
اس سے پہلے کہ رات ہو جائے
پہلے دیدار ہو مجھے تیرا
پھر فنا میری ذات ہو جائے

0
56
مُسکرانے کی دیر ہے باقی
جھلملانے کی دیر ہے باقی
میں نے رکھ دی ہیں طاق پر آنکھیں
اُس کے آنے کی دیر ہے باقی
خاک ہو جائے گی تری شہرت
سچ بتانے کی دیر ہے باقی

0
51
دردِ ہِجراں تُجھے چُھپاتے ہوئے
اشک بہتے ہیں مُسکراتے ہوئے
ٹُوٹ سکتی ہے ڈور سانسوں کی
سانس کے اِس طرح سے آتے ہوئے
اپنے حِصّے کا تُم جلاؤ دِیا
کچھ نہ سوچو دِیا جلاتے ہوئے

0
63
آندھیوں میں دئے جلائیں گے
دشت میں راستہ بنائیں گے
بے نشاں منزلوں کے راہی ہیں
کیا مُسافر یہ تھک نہ جائیں گے ؟
ہم کو دشتِ سخن میں رہنے دو
پیار کے پُھول ہم کھلائیں گے

0
52
اک شخص کر گیا ہے سپنے مرے اُداس
کُوچے مرے اُداس ہیں رستے مرے اُداس
ماتم منا رہا ہوں کسی کی جدائی کا
آہیں مری اُداس ہیں نوحے مرے اُداس
کس نے زہر یہ گھولا ہے میری مِٹھاس میں
لہجہ مرا اُداس ہے قِصّے مرے اُداس

0
54
گاؤں سے جب مَیں شہر آیا تھا
خواب آنکھوں میں باندھ لایا تھا
تُونے ٹھکرا دیا محبت کو
دل ہتھیلی پہ دھر کے لایا تھا
آبلے پڑ گئے تھے پاؤں میں
یاد ہے کتنا چل کے آیا تھا

0
70
مُجھ سے کہتا ہے غم کا مارا ہوا
میں بھی تیری طرح ہوں ہارا ہوا
ہے خبر یہ جہان کچھ بھی نہیں
مَیں ہوں اِک خواب میں اُتارا ہوا
تم ہی ٹھہرو گے انتخاب مرا
عشق مُجھ کو اگر دوبارہ ہوا

0
52
جب بھی درد کہانی لِکھنا
بوجھ سے چُور جوانی لکِھنا
اُس کے چہرے کی شادابی
میری آنکھ کا پانی لکِھنا
جب بھی لکِھنا مُجھ کو ساجن
بس اپنی دیوانی لکِھنا

0
38
نقش سارے مِٹا کے آیا ہوں
اُس کی یادیں بُھلا کے آیا ہوں
اِک سمندر ہے آنکھ میں باقی
ایک دریا بہا کے آیا ہوں
عین ممکن ہے وقت کروٹ لے
ایک دنیا جگا کے آیا ہوں

0
44
کیا خوشنما ہیں آج نظارے زمین پر
اُترے ہیں آسمان سے تارے زمین پر
خوشبو، ہوائیں، پھول یہ کُہسار اے خدا
تیرے ظُہور کے ہیں اِشارے زمین پر
آنکھوں میں وحشتوں کے شرارے لئے ہوئے
دیکھے ہیں ہم نے درد کے مارے زمین پر

0
57
یوں تو چھوٹی سی زندگانی ہے
رنج و غم سے بھری کہانی ہے
اِس میں کردار ہیں بہت یارو
پل دو پل کی مگر جوانی ہے
آنکھ سے پوچھتا ہے دل میرا
تیرے کُوزے میں کتنا پانی ہے

0
44
سب سے اچھا تیرا نام
تیرے نام پہ رکھا نام
میں نے سیکھے حرف بہت
لِکھ پایا بس تیرا نام
عشق میں ہم بدنام ہوئے
آنکھ میں ابھرا تیرا نام

0
48
دِل کی دُنیا اُداس ہو گئی ہے
کیا کوئی بات خاص ہو گئی ہے
جانے کِس گُل بدن کی خوشبو ہے
جو ہمارا لباس ہو گئی ہے
کِتنی انمول آنکھ ہے میری
جب سے مردم شناس ہو گئی ہے

0
62
ہو نہیں سکتا ستارا ایک سا
وقت کس نے کب گزارا ایک سا
چاہتوں میں شِدّتیں بھی ایک سی
چاہتوں میں ہے خسارا ایک سا
دردِ دنیا کے لئے روتے ہو تّم
دل ہے میرا اور تمہارا ایک سا

0
52
اُلجھا ہوا ہوں مَیں بھی خیالوں کے درمیاں
آہوں کے درمیاں کبھی نالوں کے درمیاں
آنکھوں میں خواب رکھ کے یہ سوچے ہیں بیٹیاں
چاندی چمکنے لگ گئی بالوں کے درمیاں
پیچھے پلٹ کے دیکھا تو حیران رہ گیا
کتنا بدل گیا ہوں میں سالوں کی درمیاں

0
39
غم کے مارے جو مّسکرائے ہیں
تیری چاہت نے گُل کِھلائے ہیں
جو خوشی بھی مِلی ادھوری تھی
ہم نے ایسے نصیب پائے ہیں
تم زمانے سے ڈر گئے صاحب
ہم نے اپنوں سے زخم کھائے ہیں

0
47
مجھ کو دیکھنے والی آنکھیں
چاہت سے ہیں خالی آنکھیں
اِک دِن پتھر ہو جائیں گی
رستہ دیکھنے والی آنکھیں
اّس کے ہونٹوں پر جو تِل ہے
کرتی ہیں رکھوالی آنکھیں

0
41
زرد رُتوں میں پُھول کِھلانے آیا ہوں
دھرتی کو گلزار بنانے آیا ہوں
اپنے حِصّے کا کرنا ہے کام مجھے
مَیں دنیا میں دیپ جلانے آیا ہوں
مَیں آنکھوں میں اشکوں کا سیلاب لئے
اپنے دل کی پیاس بُجھانے آیا ہوں

0
70
تُو نہ آیا مُجھے منانے کو
کیا مَیں سمجھوں ترے بہانے کو
دِل جُدائی نے چاٹ ڈالا ہے
لوگ کہتے ہیں مُسکرانے کو
وار تیرا خطا نہیں ہوتا
جانتا ہوں ترے نشانے کو

0
43
دِل فِدا ہو گیا نَظاروں پر
حُسن اُترا ہے کیا بہار