معزز صارفین،

یہاں پرکمنٹس میں آپ اس سائٹ کے بارے میں ہمیں اپنے مشوروں سے آگاہ کر سکتے ہیں۔ 



297
3806
جو سیاست میں لگے ہیں بےکسوں کے کام سےرہزنی وہ کر رہے ہیں رہبری کے نام سےظلم کی جو راہ پر ہیں ان کو ڈرنا چاہئیےبچ نہیں پایا ہے کوئی آہ کے انجام سےدل مرا ٹو ٹا ہوا ہے آبگینے کی طرحدیکھئے بکھرے پڑے ہیں بے وفا کے نام سےنیک نامی کا دیا جنکا جلا ہے کل تلکآج وہ کاسہ لئے ہیں پھر رہے بدنا سےماب لنچنگ میں ہوا ہے قتل بیٹے کا یہاںماں بچاری راہ تکتے رہ گئی کل شام سےاےولی اپنا حق اب چھین کر حاصل کروکون ہے بھر کر پلائے گا تمہیں بھی جام سے کوئی ہے بھر کر پلائے جو تمہیں بھی جام سے

0
6
اے گلستانِ دل کے گل و لالہ نسترن
آ بھی کہ تجھ کو روتی ہے اب نرگسِ چمن
کیا خوش ادا کہ چھیڑ گئے یار سازِ دل
کیا خوش بدن کہ مہکا گئے ہیں وہ جان و تن
کس نازکی سے ہونے لگے ہم سے ہم کلام
کس بے رخی سے چھوڑ گئے ہم کو گل بدن

1
5
میں تجھ میں ہوں تو مجھ میں ہے ہم میں کچھ بھی نہیں
کسی غم میں دونوں ہیں پر غم میں کچھ بھی نہیں
ہے یہ سب فسانہ عدم کا فسانہ کوئی
کہ آدم ہوا میں ہے آدم میں کچھ بھی نہیں
عجب حال ہے ذہن کی خستہ دیوار کا
کہ یادوں کا البم ہے البم میں کچھ بھی نہیں

0
4
گھر راہ حق میں اپنا لٹایا حسین نے
نانا کے دین کو ہے بچایا حسین نے
ہوتا ہے صبر کیا، یہ دکھایا حسین نے
کرتے ہیں شکر کیسے، سکھایا حسین نے
بخشش ہماری ہوگی انہیں کے طفیل میں
جنت میں گھر ہمارا بنایا حسین نے

0
4
محمد جان عالم ہیں کوئی جانے تو کیا جانے
حقیقت ہے کہ ان کا مرتبہ بس کبریا جانے
حبیبِ کبریا کو کل کا مالک مانتا ہوں میں
محب محبوب دو ذاتیں کوئی کیسے جدا جانے
محمد کے وسیلے سے دعائیں مانگنے والو
یقیں کامل رکھو ہر دم خدا جانے دعا جانے

0
7
محمد جان عالم ہیں کوئی جانے تو کیا جانے
حقیقت ہے ترا رتبہ فقط تیرا خدا جانے
ترے رتبے کی حد بندی پہ بہتر ہے سکوتِ لب
وہ عبدِ خاص ہیں رب کے خدا سے نہ جدا جانے
خدا سے مانگتا ہوں میں محمد کے وسیلے سے
ملے گا کب ثمر اس کا خدا جانے دعا جانے

0
13
55
اسلام کی بقا کے لئے سر کٹا دیا
سیدؑ نے رب کی راہ میں سب کچھ لُٹا دیا
پورا گھرانہ رب کے لئے وقف کر دیا
حق یوں بلند کِیا ہے کہ باطل جھکا دیا
اللّٰہ نے جو وعدہ لیا تھا خلیلؑ سے
مولاؑ نے کربلا میں وہ وعدہ نبھا دیا

0
5
نا بغضِ اہلِ بیتؑ نہ بغضِ صحابہؓ ہو
تو جان لے کہ دین مکمل ہوا ترا
میاؔں حمزہ

0
4
مفتی شاہد حسن ، مفتی شاہد حسن
ماہرِ علم و فن ، مفتی شاہد حسن
آپ شانِ بُزُرْگوں کے ہیں اک نشاں
تشنگی بجھتی ہے ، علم و فن کی جہاں
منبع علم و فن ، باغبانِ چمن
مفتی شاہد حسن ، مفتی شاہد حسن

17
بابِ جنت ہے میرے والد
رب کی رحمت ہے میرے والد
میری ہمت ہے میرے والد
جاں کی راحت ہے میرے والد
دل کی حسرت ہے میرے والد
میری دولت ہے میرے والد

4
سدا دل سے نکلے یہ ہی اک صدا
کفِ پا سے سرمہ ملے مصطفیٰ
منور رکھے دل جمالِ نبی
کریما یہ ہی ہے گدا کی ندا
رہوں بن کے بردہ سخی آل کا
کروں جان اپنی انہی پر فدا

0
5
مفتی ہدایت اللہ مفتی ہدایت اللہ
ہیں دینِ حق کے شیدا مفتی ہدایت اللہ
تفسیر ہے مثالی تقریر بھی مثالی
علموں کے ہیں وہ دریا مفتی ہدایت اللہ
مفتی ہدایت اللہ مفتی ہدایت اللہ
ہیں دینِ حق کے شیدامفتی ہدایت اللہ

12
لوگوں کے اس ہجوم میں تنہا بہت ہوں میں
لیکن مرے وجود میں اک جم غفیر ہے
واعظ مجھے ڈرا نہیں دوزخ کی آگ سے
میرا تو راہبر مرا اپنا ضمیر ہے
میں لا مکاں کی وسعتوں میں جی رہا ہوں اب
روحانیت کا مٹی میں میرے خمیر ہے

0
8
جھکا کے خود کو جھکایا ہے اک جہاں ہم نے
کہاں کیا تھا کبھی ایسا کچھ گماں ہم نے
وفا میں دیکھا نہیں سود اور زیاں ہم نے
لگادیں جان کی اس رہ میں بازیاں ہم نے
کبھی جو دل میں تکبر کی بو ہوئی محسوس
اُڑا دیں نفس کی ایسے میں دھجیاں ہم نے

0
6
سو جا جامی سو جا، گود میں میری سو جا
نیند ہے میٹھی آئے گی، ساتھ میں سپنے لائے گی
خواب میں دنیا سیرکرو، رب کا ادا تم شکر کرو
شہرِ مدینہ جانا تم، ساتھ ہمیں لے جانا تم
مِل کے گلیاں گھومیں گے، خاکِ مدینہ چومیں گے
وقت وہ صدیوں پُرانا ہو، آقا کا دور سہانا ہو

0
8
دنیا سے نرالا ہے یہ جلسہ ہمارا
ہاں فضل خدا کا ہے یہ جلسہ ہمارا
دوری کو مٹاتا ہے یہ جلسہ ہمارا
روحوں کو ملاتا ہے یہ جلسہ ہمارا
روحوں کو ہاں سرشار جو کرنے والی ہے
وہ جوت جگاتا ہے یہ جلسہ ہمارا

0
4
معزز صارفین،یہاں پرکمنٹس میں آپ اس سائٹ کے بارے میں ہمیں اپنے مشوروں سے آگاہ کر سکتے ہیں۔ 

297
3806

9
811