Circle Image

شہریار حیدر

@SheharyarHaider

شاعر، فوٹوگرافر، ڈیجیٹل پینٹ آرٹسٹ، انجینئر

ایک بت سے جو آشنائی ہوئی
پھر مخالف مرے خدائی ہوئی
تیرا سورج بجھا گیا ہے کون
اے مری شامِ غم، ستائی ہوئی
عمر بھر ہم کو مست رکھے گی
مے، تری آنکھ کی پلائی ہوئی

7
صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم
حضور آیا ہے اک دوانہ حضور سن لیں کلام اِس کا
حضور سن لیں درود اِس کا، حضور سن لیں سلام اِس کا
ہمیں یہیں پر ہی پلنے دیجے گلی سے اپنی جدا نہ کیجے
کہ کائناتوں سے ڈھیر آگے ہے ہم نے جانا مقام اِس کا
حضور یہ لٹ کہ آ گیا ہے حضور اس کو مدینہ کیجے

7
معبد کے مین ہال میں لگے گھڑیال نے
رات کے ایک بجنے کا اعلان کر دیا ہے
میری چھت سے اوپر
بہت اوپر
ایک ستارہ جگمگا رہا ہے
کہکشائیں رقص کرتے ہوئے آگے بڑھ رہی ہیں

11
اس کو میرا یقیں نہیں ہوتا
ایسا ہر گز کہیں نہیں ہوتا
کس نے معیار کو گھٹایا ہے
چاند زُہرہ جبیں نہیں ہوتا
فیصلہ ہم سفر پہ ہوتا ہے
راستہ دلنشیں نہیں ہوتا

6
کیوں کر اسے زمین کی رہ پر دھکیلا تھا؟
کیا آسماں میں چاند بہت ہی اکیلا تھا؟
اک تم کہ شہرِ وصل کے مہنگے وکیل تھے
اک میں کہ جیب میں کوئی پیسہ نا دھیلا تھا

6
ایسے جنجال ہیں محبت کے
پھول مرجھا گئے طبیعت کے
اپنی حالت عجیب حالت ہے
ہم نہیں اب کسی بھی حالت کے
کتنا دشوار ہے یہاں ہونا
کتنے آلام ہیں حقیقت کے

10
کیسے ہنستی ہوئی آنکھوں کو یوں رونے دیتا
عشق آسان نہیں تھا کہ میں ہونے دیتا
ہم کو بس ایک گلہ ہے ترے بخشے غم سے
کچھ بھی کرنے نہیں دیتا تھا تو سونے دیتا
تو بلائے تو انہیں بیگ میں رکھنا پڑ جائے
یہ وہ خدشہ ہے جو کپڑے نہیں دھونے دیتا

7