ایک خوبصورت بحر - بحرِ خفیف
یہ مضمون نومبر 2007ء میں لکھا تھا اور "اردو محفل" پر شائع کیا۔
------------------------
حصۂ اول ۔ بحرِ خفیف مسدس مخبون محذوف مقطوع - تعارف اور اوزان
بڑی بحر ایک دریا کی مانند ہوتی ہے۔ طغیانی میں ہو تو ہر چیز خس و خاشاک کی طرح بہا لے جائے۔ موج میں ہو تو لہریں گنتے جاؤ اور ختم نہ ہوں اور اگر کہیں روانی میں کمی آ جائے تو جگہ جگہ جوہڑ بن جاتے ہیں، 'بڈھے' روای کی طرح۔ اس کے مقابلے میں چھوٹی بحر ایک گنگناتی، لہراتی، بل کھاتی، مچلتی ندی کی طرح ہے۔ اور جیسے کسی دیو ہیکل پہاڑ کی اوٹ سے جھرنا ایک دم آنکھوں کے سامنے خوشنما منظر لیے آجاتا ہے اسی طرح چھوٹی بحروں میں کہی ہوئی بات دھم سے آنکھوں کو چکا چوند کردیتی ہے اور دماغ بغیر سوچ و بچار میں پڑے فوراً روشن ہو جاتا ہے۔
 
چھوٹی بحروں میں شاعری کرنا ہر شاعر کا مشغلہ رہا ہے۔ اساتذہ سے لیکر موجودہ عصر تک ہر شاعر نے ان بحروں میں طبع آزمائی کی ہے، اور اصنافِ سخن میں سے غزل کو اس میں خاص امتیاز حاصل ہے۔ تھوڑے اور گنے چنے الفاظ میں غزل کی رنگینیٔ بیاں کو نبھاتے ہوئے دو مصرعوں میں بات مکمل کر دینا بلکہ سامع تک پوری بلاغت سے پہنچا دینا واقعتاً ایک معانی رکھتا ہے۔ لیکن یہ ایک حقیقت ہے کہ چھوٹی بحروں میں کہی ہوئی اچھی غزلیں اردو ادب میں سدا بہار کا مقام رکھتی ہیں اور ان غزلوں کے اشعار اور مصرعے ضرب المثل کا مقام حاصل کرچکے ہیں۔
 
انہی چھوٹی بحروں میں ایک بحر، بحرِ خفیف ہے۔ بحرِ خفیف ایک مسدس (تین ارکان والی) بحر ہے اور تقریباً تمام مسدس بحریں چھوٹی ہیں کہ ان میں مثمن (چار ارکان والی) بحروں کے مقابلے میں ایک رکن کم ہوتا ہے اور پھر زحافات کا استعمال انہیں مزید مختصر کیے ہی چلا جاتا ہے۔ بحرِ خفیف کی ایک مزاحف شکل ،بحرِ خفیف مسدس مخبون محذوف مقطوع' کا تعارف اور اس مخصوس بحر میں کہی ہوئی مشہور غزلیات کی ایک فہرست اس مضمون کا مقصود ہے۔
 
وجۂ تسمیہ
بحرِ خفیف کی وجۂ تسمیہ صاحبِ بحر الفصاحت، مولوی نجم الدین غنی رامپوری نے یہ بیان کی ہے۔
"خفیف کے معنی ہلکے ہیں۔ چونکہ اس بحر کے سب ارکان ہلکے ہیں بسب اس کے کہ دو سبب وتد مجموع کو گھیرے ہوئے ہیں، اس لئے اس بحر کا نام خفیف رکھا ہے۔ اس بحر کو متاخرین شعرائے ریختہ نے سوائے مسدس مزاحف کے اور کسی طرح استعمال نہیں کیا۔"
 
آخری جملے سے یہ بھی معلومات ملتی ہیں کہ اب سالم حالت میں، مثمن و مسدس و مربع، یہ بحر استعمال نہیں ہوتی اور مزاحف بھی صرف مسدس (یعنی جس بحر کے ایک مصرعے میں تین رکن ہوں) استعمال ہوتی ہے۔
 
اوزان
بحرِ خفیف سالم الاصل کے اوزان یہ ہیں۔
 
مثمن۔ فاعِلاتُن مُستَفعِلُن فاعِلاتُن مُستَفعِلُن
مسدس۔ فاعِلاتُن مُستَفعِلُن فاعِلاتُن
 
لیکن جیسا کہ اوپر بیان کیا گیا ہے کہ یہ مضمون بحر خفیف کی ایک مسدس مزاحف شکل 'بحر خفیف مسدس مخبون مخذوف مقطوع' کے متعلق ہے اور اسی بحر کے اوزان سے یہاں بحث کی جائے گی۔
بحر خفیف مسدس مخبون مخذوف مقطوع کا وزن 'فاعِلاتُن مَفاعِلُن فَعلُن' ہے (فعلن میں ع کے سکون کے ساتھ)۔ اس بحر کا یہ وزن بحر خفیف مسدس سالم الاصل پر زحافات کے استعمال سے حاصل ہوتا ہے، یہ زحافات بحر کے نام میں ہی شامل ہیں یعنی زحافات خبن، حذف اور قطع۔
اس بحر کے وزن میں میں کچھ رعائیتیں اور اجازتیں دی گئی ہیں جس سے اس بحر کا حسن بہت بڑھ جاتا ہے اور ایک ہی بحر میں رہتے ہوئے اپنی مرضی کے اور فصیح سے فصیح تر الفاظ استعمال کیے جا سکتے ہیں۔ یہ اجازتیں کچھ اسطرح سے ہیں۔
 
1- اس بحر یعنی خفیف مسدس مخبون محذوف مقطوع کو بحر خفیف مسدس کی ہی ایک اور مزاحف صورت 'خفیف مسدس مخبون محذوف' کے ساتھ جمع کیا جا سکتا ہے۔ اس بحر کا وزن 'فاعِلاتُن مُفاعِلُن فَعِلُن' ہے (فعِلن میں ع کے کسرے یا زیر کے ساتھ)۔
 
2- ان دونوں مسدس بحروں یعنی مخبون محذوف مقطوع اور مخبون محذوف کے صدر و ابتدا (یعنی بالترتیب ہر شعر کے پہلے مصرعے کے پہلے رکن اور دوسرے مصرعے کے پہلے رکن) اور عروض و ضروب (یعنی بالترتیب ہر شعر کے پہلے مصرعے کے آخری رکن اور دوسرے مصرعے کے آخری رکن) میں ان اوزان کو جمع کرنے کی اجازت ہے۔
 
اول۔ صدو ابتدا میں جو اس بحر میں 'فاعلاتن' ہے کو اس رکن کی مخبون شکل یعنی 'فَعِلاتُن' کے ساتھ بدل سکتے ہیں۔ اور ایک شعر میں دونوں اوزان لا سکتے ہیں۔
 
دوم۔ عروض و ضروب میں جو اس بحر میں فَعلُن (عین کے سکون کے ساتھ) ہے کو فَعِلُن (عین کے کسرہ کے ساتھ) اور ان دونوں کی ہی مسبغ اشکال یعنی فَعلان (عین کے سکون کے ساتھ) اور فَعِلان (عین کے کسرہ کے ساتھ) کے ساتھ بدل سکتے ہیں۔
 
3- حشو (یعنی صدر و ابتدا اور عروض و ضروب کے درمیان آنے والے تمام اراکین) جو اس بحر میں صرف 'مفاعِلن' ہے کو کسی اور رکن کے ساتھ تبدیل نہیں کر سکتے وگرنہ بحر بدل جائے گی۔
اوپر دئے گئے اصولوں کی مدد سے اگر اس بحر میں جمع کئے جانے والے اوازن کی ایک فہرست بنائی جائے تو اس بحر میں تکنیکی طور پر آٹھ اوزان کو ایک ہی غزل میں یا ان میں سے کسی دو کو ایک ہی شعر میں جمع کیا جا سکتا ہے۔ یہ فہرست کچھ اسطرح سے ہے۔
 
1- فاعِلاتُن مُفاعِلُن فَعلُن (فعلن میں عین کے سکون کے ساتھ)
2- فَعِلاتُن مُفاعِلُن فَعلُن
3- فاعِلاتن مفاعِلن فعلان (فعلان میں عین کے سکون کے ساتھ)
4- فَعِلاتن مفاعِلن فعلان
5- فاعِلاتن مفاعِلن فَعِلُن (فعِلن میں عین کے کسرہ کے ساتھ)
6- فَعِلاتن مفاعلن فَعِلُن
7- فاعِلاتن مفاعلن فعِلان (فعِلان میں عین کے کسرہ کے ساتھ)
8- فَعِلاتن مفاعِلن فعِلان
 
یہاں پر ایک بات کی وضاحت کرتا چلوں کہ کلاسیکی عروض میں اوپر دیئے گئے آٹھوں اوزان کی بحروں کے علیحدہ علیحدہ نام تھے لیکن ان سب کو ایک ہی غزل میں جمع کرنے کی اجازت تھی لیکن جدید فارسی اور اردو عروض میں ان آٹھ اوزان کو تو علیحدہ مانا جاتا ہے اور جمع بھی کر سکتے ہیں لیکن آٹھ بحروں کی بجائے انھیں دو بحریں ہی تصور کیا جاتا ہے کہ عملی لحاظ سے یہ بات بالکل صحیح ہے۔
 
مختلف اوزان کو جمع کرنے کی امثال
 
اب ہم اوپر دیئے گئے اوزان کو ایک ہی غزل میں جمع کرنے کی دو مثالیں دیکھتے ہیں۔ یوں تو بے شمار غزلیں ہیں جن میں مندرجہ بالا اوزان کو جمع کیا گیا ہے لیکن میں نے اس کیلیے ایک غالب کی اور ایک فیض کی غزل منتخب کی ہے اور دیکھتے ہیں کہ ان دو عظیم شعرا نے کس مہارت کے ساتھ مختلف اوزان کو ایک ہی غزل میں جمع کیا ہے۔
 
غالب کی غزل کے اشعار
 
نے گُلِ نغمہ ہوں نہ پردۂ ساز
میں ہوں اپنی شکست کی آواز
 
مصرع اول عروضی متن و وزن
نے گُ لے نغ (فاعلاتن) مَ ہو نَ پر (مفاعِلن) دَ ء ساز (فعِلان) یہ فاعلاتن مفاعلن فعِلان اوپر دی گئی فہرست میں وزن نمبر 7 ہے۔
 
مصرع ثانی عروضی متن و وزن
مے ہُ اپنی (فاعلاتن) شکست کی (مفاعلن) آواز (فعلان)۔ فاعلاتن مفاعلن فعلان۔ وزن نمبر 3۔
 
تُو اور آرائشِ خمِ کاکُل
میں اور اندیشہ ہائے دور و دراز
 
مصرع اول عروضی متن و وزن
تُو اَ را را (فاعلاتن) ء شے خَ مے (مفاعلن) کاکل (فعلن)۔ فاعلاتن مفاعلن فعلن، وزن نمبر 1۔
 
مصرع ثانی عروضی متن و وزن
مے اَ رن دے (فاعلاتن) شَ ہاے دُو (مفاعلن) ر دراز (فعِلان) وزن نمبر 7۔
 
لافِ تمکیں فریب سادہ دلی
ہم ہیں اور راز ہائے سینہ گداز
 
مصرع اول عروضی متن و وزن
لاف تمکیں (فاعلاتن) فریب سا (مفاعلن) دَ دلی (فعِلن)۔ فاعلاتن مفاعلن فعِلن۔ وزن نمبر 5۔
 
مصرع ثانی۔ وزن نمبر 7 میں ہے۔
 
نہیں دل میں مرے وہ قطرۂ خوں
جس سے مژگاں ہوئی نہ ہو گل باز
 
مصرع اول عروضی متن و وزن
نَ ہِ دل میں (فعلاتن) مرے وُ قَط (مفاعلن) رَ ء خو (فعِلن)۔ فعلاتن مفاعلن فعِلن۔ وزن نمبر 6۔
مصرع ثانی وزن نمبر 3 میں ہے۔
 
یوں اس غزل میں غالب نے پانچ اوزان جمع کئے ہیں جو کہ اوپر والی فہرست کے مطابق اوزان نمبر 1، 3، 5، 6 اور 7 بنتے ہیں۔
 
فیض کی غزل کے اشعار
 
اب فیض احمد احمد فیض کی ایک غزل کے اشعار دیکھتے ہیں۔
 
آئے کچھ ابر کچھ شراب آئے
اس کے بعد آئے جو عذاب آئے
 
مصرع اول عروضی متن و وزن
آے کچ اب (فاعلاتن) ر کچ شرا (مفاعلن) بائے (فعلن)۔ فاعلاتن مفاعلن فعلن۔ وزن نمبر 1۔
مصرع ثانی عروضی متن و وزن
 
اس کِ بع دا (فاعلاتن) ء جو عذا (مفاعلن) بائے (فعلن)۔ فاعلاتن مفاعلن فعلن۔ وزن نمبر 1۔
 
عمر کے ہر وَرق پہ دل کو نظر
تیری مہر و وفا کے باب آئے
 
مصرع اول عروضی متن و وزن
عمر کے ہر (فاعلاتن) ورق پہ دل (مفاعلن) کُ نظر (فعِلن)۔ فاعلاتن مفاعلن فعِلن۔ وزن نمبر 5۔
 
مصرع ثانی، وزن نمبر 1 میں ہے۔
 
کر رہا تھا غمِ جہاں کا حساب
آج تم یاد بے حساب آئے
 
مصرع اول عروضی متن و وزن
کر رہا تھا (فاعلاتن) غَ مے جہا (مفاعلن) کَ حساب (فعِلان)۔ فاعلاتن مفاعلن فعِلان۔ وزن نمبر 7۔
 
مصرع ثانی، وزن نمبر 1 میں ہے۔
 
نہ گئی تیرے غم کی سرداری
دل میں یوں روز انقلاب آئے
 
مصرع اول عروضی متن و وزن
نَ گئی تے (فعلاتن) رِ غم کِ سر (مفاعلن) داری (فعلن)۔ فعلاتن مفاعلن فعلن۔ وزن نمبر 2۔
 
مصرع ثانی، وزن نمبر 1 میں ہے۔
 
جل اٹھے بزمِ غیر کے در و بام
جب بھی ہم خانماں خراب آئے
 
مصرع اول عروضی متن و وزن
جل اٹھے بز (فاعلاتن) مِ غیر کے (مفاعلن) در بام (فعلان)۔ فاعلاتن مفاعلن فعلان۔ وزن نمبر 3۔
 
مصرع ثانی، وزن نمبر 1 میں ہے۔
 
اس غزل میں فیض نے مجموعی طور پر پانچ اوزان جمع کئے ہیں جو اوپر والی اوزان کی فہرست کے مطابق وزن نمبر 1، 2، 3، 5 اور 7 ہیں۔
 
آٹھوں اوزان کی امثال (اوزان کے نمبر اوپر والی فہرست کے مطابق ہیں)
 
شعر فیض
آئے کچھ ابر کچھ شراب آئے
اس کے بعد آئے جو عذاب آئے
 
دونوں مصرعے 'فاعلاتن مفاعلن فعلن' میں ہیں (وزن نمبر 1)
 
شعرِ فیض
نہ گئی تیرے غم کی سرداری
دل میں یوں روز انقلاب آئے
 
اس شعر کا پہلا مصرع 'فعِلاتن مفاعلن فعلن' میں ہے (وزن نمبر 2)۔ دوسرا مصرع وزن نمبر 1 میں ہے۔
 
شعرِ فیض
جل اٹھے بزمِ غیر کے در و بام
جب بھی ہم خانماں خراب آئے
 
پہلا مصرع 'فاعلاتن مفاعلن فعلان' میں ہے (وزن نمبر 3)، دوسرا مصرع وزن نمبر 1 میں ہے۔
 
شعر مصحفی
نہ تو مے لعلِ یار کے مانند
نہ گل اس کے عذار کے مانند
 
دونوں مصرعے 'فعلاتن مفاعلن فعلان' میں ہیں (وزن نمبر 4)۔
 
شعرِ فیض
عمر کے ہر وَرَق پہ دل کو نظر
تیری مہر و وفا کے باب آئے
 
پہلا مصرع 'فاعلاتن مفاعلن فعِلن' میں ہے (وزن نمبر 5)۔
 
شعرِ غالب
نہیں دل میں مرے وہ قطرۂ خوں
جس سے مژگاں ہوئی نہ ہو گل باز
 
پہلا مصرع 'فعلاتن مفاعلن فعِلن' میں ہے (وزن نمبر 6)۔ دوسرا مصرع وزن نمبر 3 میں ہے۔
 
شعرِ فیض
کر رہا تھا غمِ جہاں کا حساب
آج تم یاد بے حساب آئے
 
پہلا مصرع 'فاعلاتن مفاعلن فعِلان' وزن نمبر 7 میں ہے۔
 
شعرِ داغ
غم اٹھانے کے ہیں ہزار طریق
کہ زمانے کے ہیں ہزار طریق
 
دوسرا مصرع 'فعلاتن مفاعلن فعِلان' میں ہے (وزن نمبر 8)۔ پہلا مصرع وزن نمبر 7 میں ہے۔
 
مشابہت
 
بحروں میں مشابہت کے حوالے سے محمد حسین آزاد کا آبِ حیات میں تحریر کردہ ایک واقعہ یاد آگیا جو انہوں انشاءاللہ خان انشا کے تذکرے میں بیان کیا ہے۔
 
"۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان میں مرزا عظیم بیگ تھے کہ سودا کے دعوٰی شاگردی اور پرانی مشق کے گھمنڈ نے انکا دماغ بہت بلند کر دیا تھا۔ وہ فقط شد بود کا علم رکھتے تھے مگر اپنے تئیں ہندوستان کا صائب کہتے تھے اور خصوصاً ان معرکوں میں سب سے بڑھ کر قدم مارتے تھے۔ چنانچہ وہ ایک دن میر ماشاءاللہ خاں کے پاس آئے اور غزل سنائی کہ بحر رجز میں تھی مگر ناواقفیت سے کچھ شعر رمل میں جا پڑے تھے۔ سید انشاءاللہ بھی موجود تھے، تاڑ گئے۔ حد سے زیادہ تعریف کی اور اصرار سے کہا کہ مرزا صاحب اسے آپ مشاعرے میں ضرور پڑھیں۔ مدعی کمال کہ مغز سخن سے بے خبر تھا اس نے مشاعرہ عام میں غزل پڑھ دی۔ سید انشاءاللہ نے وہیں تقطیع کی فرمائش کی۔ اس وقت اس غریب پر جو گزری سو گزری مگر سید انشاءاللہ نے اس کے ساتھ سب کو لے ڈالا اور کوئی دم نہ مار سکا۔ بلکہ ایک مخمس بھی پڑھا، جس کا مطلع یہ ہے۔
 
گر تو مشاعرے میں صبا آج کل چلے
کہیو عظیم سے کہ ذرا وہ سنبھل چلے
اتنا بھی حد سے اپنی نہ باہر نکل چلے
پڑھنے کو شب جو یار غزل در غزل چلے
بحر رجز میں ڈال کے بحر رمل چلے"
 
اس واقعے کا ذکر مولوی نجم الدین غنی نے عیوبِ عروض کے تحت کیا ہے اور شعراء کرام کو متنبہ کیا ہے جو بحریں آپس میں متشابہ ہیں ان کو استعمال کرتے ہوئے احتیاط برتیں۔
 
اور یہ بات ہماری مذکورہ بحر کیلیے بھی حرف بحرف صحیح ہے کہ اس بحر کی مشابہت یوں تو کئی بحروں کے ساتھ ہے لیکن بحر 'رمل مسدس مخبون محذوف مقطوع' کے ساتھ تو حد سے زیادہ متشابہ ہے۔ اس دوسری بحر کا وزن 'فاعلاتن فعِلاتن فعلن' ہے اور اسکے صدر و ابتدا اور عروض و ضروب میں بھی وہی اور اتنے ہی اوزان آ سکتے ہیں جو کہ بحرِ خفیف کے ہیں یعنی اس میں بھی مجموعی طور پر آٹھ اوزان جمع ہو سکتے ہیں لیکن خفیف اور رمل مقطوع میں فرق یہ ہے کہ خفیف کا حشو 'مفاعلن' جب کہ رمل کا حشو 'فعِلاتن' ہے۔ اگر آپ اوپر دیئے گئے آٹھ اوزان کی فہرست دیکھیں تو نوٹ کریں گے کہ ان آٹھ اوزان میں صدر و ابتدا اور عروض و ضروب تو تبدیل ہو رہے ہیں لیکن حشو تبدیل نہیں ہو رہا بعینہ اسی طرح 'رمل' میں حشو 'فعِلاتن' تبدیل نہیں ہوتا اور صدر و ابتدا اور عروض و ضروب وہی ہیں جو 'خفیف' کے ہیں۔
 
یہ ایک انتہائی لطیف اور کم فرق ہے، یہ ایسے ہی جیسے آپ کہیں 'دعا یہ ہے' تو یہ بر وزن 'مفاعلن' ہے لیکن اگر کہیں 'یہ دعا ہے' تو یہ 'فعِلاتن' کے وزن پر ہے اور صرف ایک حرف کی جگہ تبدیل کرنے سے بحر بدل جائے گی۔
 
حصۂ دوم - بحرِ خفیف مسدس مخبون محذوف مقطوع میں کہی گئی کچھ مشہور غزلیات
 
اس مضمون کا عنوان "ایک خوبصورت بحر" میرے ذہن میں اس بحر میں کہی گئی مشہور غزلیات کو دیکھ کر آیا تھا۔ اور دوسری بات یہ تھی کہ اس بحر میں کہی گئی غزلیات ہمارے گلوکاروں میں بھی مقبول رہی ہیں اور بعضوں نے تو بہت اچھے انداز میں انہیں گایا ہے۔ انہی غزلیات میں سے کچھ غزلیات نیچے دی جا رہی ہیں۔ فہرست بالکل اور مکمل تاریخی ترتیب سے نہیں ہے لیکن بہرحال زمانے کا میں نے خیال رکھا ہے۔ ایک التزام میں نے یہ کیا ہے کہ ہر غزل کا مطلع دیا ہے اور اسکے ساتھ کچھ مشہور یا اپنی پسند کے اشعار بھی دے دیئے ہیں۔
 
ولی دکنی 
دل ہوا ہے مرا خرابِ سخن
دیکھ کر حسن بے حجابِ سخن
 
راہِ مضمونِ تازہ بند نہیں
تا قیامت کھلا ہے بابِ سخن
 
اے ولی دردِ سر کبھو نہ رہے
جب ملے صندل و گلابِ سخن
 
ولہ
خوب رو خوب کام کرتے ہیں
یک نگہ میں غلام کرتے ہیں
 
دل لجاتے ہیں اے ولی میرا
سرو قد جب خرام کرتے ہیں
 
ولہ
عارفاں پر ہمیشہ روشن ہے
کہ فنِ عاشقی عجب فن ہے
 
مجکوں روشن دلاں نے دی ہے خبر
کہ سخن کا چراغ روشن ہے
 
ولہ
عشق بے تاب جاں گدازی ہے
حسن مشتاقِ دل نوازی ہے
 
اے ولی عیشِ ظاہری کا سبب
جلوۂ شاہدِ مجازی ہے
 
میر تقی میر
یہ بحر میر کی مرغوب ترین بحروں میں سے لگتی ہے کہ میر کے اس بحر میں سو کے قریب غزلیات صرف دیوانِ اول ہی میں ہیں۔
 
ہستی اپنی حباب کی سی ہے
یہ نمائش سراب کی سی ہے
 
نازکی اس کے لب کی کیا کہیئے
پنکھڑی اک گلاب کی سی ہے
 
میر ان نیم باز آنکھوں میں
ساری مستی شراب کی سی ہے
 
ولہ
دیکھ تو دل کہ جاں سے اٹھتا ہے
یہ دھواں سا کہاں سے اٹھتا ہے
 
گور کس دل جلے کی ہے یہ فلک
شعلہ اک صبح یاں سے اٹھتا ہے
 
عشق اک میر بھاری پتھّر ہے
کب یہ تجھ ناتواں سے اٹھتا ہے
 
ولہ
قصد اگر امتحان ہے پیارے
اب تلک نیم جان ہے پیارے
 
گفتگو ریختے میں ہم سے نہ کر
یہ ہماری زبان ہے پیارے
 
میر عمداً بھی کوئی مرتا ہے
جان ہے تو جہان ہے پیارے
 
ولہ
بار ہا گور دل جھکا لایا
اب کی شرطِ وفا بجا لایا
 
ابتدا ہی میں مر گئے سب یار
عشق کی کون انتہا لایا
 
اب تو جاتے ہیں بتکدے سے میر
پھر ملیں گے اگر خدا لایا
 
ولہ
اشک آنکھوں میں کب نہیں آتا
لہو آتا ہے جب نہیں آتا
 
ہوش جاتا نہیں رہا لیکن
جب وہ آتا ہے تب نہیں آتا
 
عشق کو حوصلہ ہے شرط ورنہ
بات کا کسو ڈھب نہیں آتا
 
دور بیٹھا غبارِ میر اس سے
عشق بن یہ ادب نہیں آتا
 
ولہ
ہے غزل میر یہ شفائی کی
ہم نے بھی طبع آزمائی کی
 
وصل کے دن کی آرزو ہی رہی
شب نہ آخر ہوئی جدائی کی
 
زور و زر کچھ نہ تھا تو بارے میر
کس بھروسے پہ آشنائی کی
 
ولہ
ہم ہوئے تم ہوئے کہ میر ہوئے
اس کی زلفوں کے سب اسیر ہوئے
 
نہیں آتے کسو کی آنکھوں میں
ہو کے عاشق بہت حقیر ہوئے
 
ولہ
عمر بھر ہم رہے شرابی سے
دلِ پر خوں کی اک گلابی سے
 
کام تھے عشق میں بہت پر میر
ہم ہی فارغ ہوئے شتابی سے
 
ولہ
گل و بلبل بہار میں دیکھا
ایک تجھ کو ہزار میں دیکھا
 
جن بلاؤں کو میر سنتے تھے
ان کو اس روزگار میں دیکھا
 
ولہ
تا بہ مقدور انتظار کیا
دل نے پھر زور بے قرار کیا
 
یہ توہّم کا کارخانہ ہے
یاں وہی ہے جو اعتبار کیا
 
سخت کافر تھا جن نے پہلے میر
مذہبِ عشق اختیار کیا
 
ولہ
گل کو محبوب میں قیاس کیا
فرق نکلا بہت جو باس کیا
صبح تک شمع سر کو دھنتی رہی
کیا پتنگے نے التماس کیا
ولہ
خوب رو سب کی جان ہوتے ہیں
آرزوئے جہان ہوتے ہیں
کیا رہا ہے مشاعرے میں اب
لوگ کچھ جمع آن ہوتے ہیں
میر و مرزا رفیع و خواجہ میر
کتنے اک یہ جوان ہوتے ہیں
ولہ
ہو گئی شہر شہر رسوائی
اے مری موت تو بھلی آئی
میر جب سے گیا ہے دل تب سے
میں تو کچھ ہو گیا ہوں سودائی
ولہ
رنج کھینچے تھے داغ کھائے تھے
دل نے صدمے بڑے اٹھائے تھے
پاسِ ناموسِ عشق تھا ورنہ
کتنے آنسو پلک تک آئے تھے
میر صاحب رولا گئے سب کو
کل وے تشریف یاں بھی لائے تھے
ولہ
کیا حقیقت کہوں کہ کیا ہے عشق
حق شناسوں کا ہاں خدا ہے عشق
کوہ کن کیا پہاڑ کاٹے گا
پردے میں زور آزما ہے عشق
کون مقصد کو عشق بنِ پہنچا
آرزو عشق، مدّعا ہے عشق
خواجہ میر درد
جگ میں آ کر اِدھر اُدھر دیکھا
تُو ہی آیا نظر، جدھر دیکھا
اُن لبوں نے نہ کی مسیحائی
ہم نے سَو سَو طرح سے مر دیکھا
زور عاشق مزاج ہے کوئی
درد کو قصّہ مختصر دیکھا
ولہ
جگ میں کوئی نہ ٹک ہنسا ہوگا
کہ نہ ہنستے میں رو دیا ہوگا
ان نے قصداً بھی میرے نالے کو
نہ سنا ہوگا، گر سنا ہوگا
دل زمانے کے ہاتھ سے سالم
کوئی ہوگا جو رہ گیا ہوگا
دل بھی اے درد قطرۂ خوں تھا
آنسوؤں میں کہیں گرا ہوگا
ولہ
ہے غلط گر گُمان میں کچھ ہے
تجھ سوا بھی جہان میں کچھ ہے
دل بھی تیرے ہی ڈھنگ سیکھا ہے
آن میں کچھ ہے، آن میں کچھ ہے
اِن دنوں کچھ عجب حال ہے مرا
دیکھتا کچھ ہوں، دھیان میں کچھ ہے
انشاءاللہ خاں انشا
ضعف آتا ہے، دل کو تھام تو لو
بولیو مت، مگر سلام تو لو
انھیں باتوں پہ لوٹتا ہوں میں
گالی پھر دے کے میرا نام تو لو
یک نگہ پر بِکے ہے انشا آج
مفت میں مول اک غلام تو لو
حیدر علی آتش
غیرتِ مہر، رشک ماہ ہو تم
خوبصورت ہو، بادشاہ ہو تم
کیوں کر آنکھیں نہ ہم کو دکھلاؤ
کیسے خوش چشم، خوش نگاہ ہو تم
غلام ہمدانی مصحفی
خواب تھا یا خیال تھا کیا تھا
ہجر تھا یا وصال تھا کیا تھا
جس کو ہم روزِ ہجر سمجھے تھے
ماہ تھا یا وہ سال تھا کیا تھا
مصحفی شب جو چپ تُو بیٹھا تھا
کیا تجھے کچھ ملال تھا کیا تھا
ولہ
یوں تو دنیا میں کیا نہیں ملتا
پر دلِ با صفا نہیں ملتا
بت پرستی سے باز آ اے دل
بت کے پوجے سے خدا نہیں ملتا
ہو کے روکھا وہ یوں لگا کہنے
کیا کرے گا بے، جا نہیں ملتا
ولہ
نہ تو مے لعلِ یار کے مانند
نہ گل اس کے عذار کے مانند
پھر گئیں ہم سے یار کی آنکھیں
گردشِ روزگار کے مانند
تربتِ مصحفی کو دیکھا کل
ڈھیر تھا اک مزار کے مانند
میرزا غالب
غالب کی ایک خوبی یہ بھی ہے کہ ان کے انتہائی مختصر سے دیوان میں جتنی مشہور غزلیں ہیں شاید ہی کسی اور شاعر کی ہوں۔ اور یہی معاملہ اس بحر کے ساتھ ہے کہ کل ملا کر کوئی دس کے لگ بھگ غزلیں اس بحر میں ہیں اور ایک سے بڑھ کر ایک، اور ہر غزل کا تقریباً ہر شعر ہی لا جواب ہے۔ غزلوں کے علاوہ کچھ قطعات اور مثنوی 'در صفتِ انبہ' بھی اسی بحر میں ہے۔
درد منّت کشِ دوا نہ ہوا
میں نہ اچّھا ہوا، بُرا نہ ہوا
جمع کرتے ہو کیوں رقیبوں کو
اک تماشا ہوا، گِلا نہ ہوا
جان دی، دی ہوئی اُسی کی تھی
حق تو یوں ہے کہ حق ادا نہ ہوا
کچھ تو پڑھیے کہ لوگ کہتے ہیں
آج غالب غزل سرا نہ ہوا
ولہ
وہ فراق اور وہ وصال کہاں
وہ شب و روز و ماہ و سال کہاں
تھی وہ اک شخص کے تصور سے
اب وہ رعنائیِ خیال کہاں
فکرِ دنیا میں سر کھپاتا ہوں
میں کہاں اور یہ وبال کہاں
ولہ
کوئی امّید بر نہیں آتی
کوئی صورت نظر نہیں آتی
موت کا ایک دن معیّن ہے
نیند کیوں رات بھر نہیں آتی
جانتا ہوں ثوابِ طاعت و زہد
پر طبیعت ادھر نہیں آتی
کعبے کس منہ سے جاؤ گے غالب
شرم تم کو مگر نہیں آتی
ولہ
دلِ ناداں تجھے ہوا کیا ہے
آخر اس درد کی دوا کیا ہے
جب کہ تجھ بن نہیں کوئی موجود
پھر یہ ہنگامہ اے خدا کیا ہے
ہم کو ان سے وفا کی ہے امّید
جو نہیں جانتے وفا کیا ہے
جان تم پر نثار کرتا ہوں
میں نہیں جانتا دعا کیا ہے
ولہ
پھر کچھ اک دل کو بے قراری ہے
سینہ جویائے زخمِ کاری ہے
پھر اُسی بے وفا پہ مرتے ہیں
پھر وہی زندگی ہماری ہے
بے خودی بے سبب نہیں غالب
کچھ تو ہے جس کی پردہ داری ہے
ولہ
میں انھیں چھیڑوں اور کچھ نہ کہیں
چل نکلتے جو مے پیے ہوتے
قہر ہو یا بلا ہو، جو کچھ ہو
کاشکے تم مرے لیے ہوتے
میری قسمت میں غم گر اتنا تھا
دل بھی، یا رب کئی دیے ہوتے
ولہ
پھر اس انداز سے بہار آئی
کہ ہوئے مہر و مہ تماشائی
ہے ہوا میں شراب کی تاثیر
بادہ نوشی ہے، باد پیمائی
ولہ
نے گلِ نغمہ ہوں نہ پردۂ ساز
میں ہوں اپنی شکست کی آواز
تُو اور آرائشِ خمِ کاکل
میں اور اندیشہ ہائے دور و دراز
مجھ کو پوچھا تو کچھ غضب نہ ہوا
میں غریب اور تُو غریب نواز
ولہ
ابنِ مریم ہوا کرے کوئی
میرے دکھ کی دوا کرے کوئی
بک رہا ہوں جنوں میں کیا کیا کچھ
کچھ نہ سمجھے خدا کرے کوئی
جب توقّع ہی اٹھ گئی غالب
کیوں کسی کا گِلا کرے کوئی
ولہ
درد ہو دل میں تو دوا کیجے
دل ہی جب درد ہو تو کیا کیجے
ان بتوں کو خدا سے کیا مطلب
توبہ توبہ، خدا خدا کیجے
رنج اٹھانے سے بھی خوشی ہوگی
پہلے دل درد آشنا کیجے
موت آتی نہیں کہیں غالب
کب تک افسوس زیست کا کیجے
مومن خاں مومن
اثر اس کو ذرا نہیں ہوتا
رنج، راحت فزا نہیں ہوتا
اس نے کیا جانے، کیا کیا لے کر
دل کسی کام کا نہیں ہوتا
تم مرے پاس ہوتے ہو گویا
جب کوئی دوسرا نہیں ہوتا
کیوں سنے عرضِ مضطر اے مومن
صنم آخر خدا نہیں ہوتا
ولہ
قہر ہے، موت ہے، قضا ہے عشق
سچ تو یہ ہے بری بلا ہے عشق
دیکھئے کس جگہ ڈبو دے گا
میری کشتی کا نا خدا ہے عشق
آپ مجھ سے نباہیں گے، سچ ہے
با وفا حسن، بے وفا ہے عشق
قیس و فرہاد و وامق و مومن
مر گئے سب ہی، کیا وبا ہے عشق
ولہ
مجھ کو تیرے عتاب نے مارا
یا مرے اضطراب نے مارا
مومن از بس ہیں بے شمار گناہ
غمِ روزِ حساب نے مارا
ولہ
امتحاں کے لئے جفا کب تک
التفاتِ ستم نما کب تک
مر چلے اب تو اس صنم سے ملیں
مومن اندیشۂ خدا کب تک
ولہ
عشق نے یہ کیا خراب ہمیں
کہ ہے اپنے سے اجتناب ہمیں
اے تپِ ہجر دیکھ مومن ہیں
ہے حرام آگ کا عذاب ہمیں
ابراہیم ذوق
وقتِ پیری شباب کی باتیں
ایسی ہیں جیسی خواب کی باتیں
پھر مجھے لے چلا ادھر دیکھو
دلِ خانہ خراب کی باتیں
تجھ کو رسوا کرئینگی خوب اے دل
تیری یہ اضطراب کی باتیں
ولہ
خوب روکا شکایتوں سے مجھے
تُو نے مارا عنایتوں سے مجھے
واجب القتل اس نے ٹھرایا
آیتوں سے روایتوں سے مجھے
ولہ
آنکھ اس پر جفا سے لڑتی ہے
جان کُشتی قضا سے لڑتی ہے
شعلہ بھڑکے گا کیا بھلا سرِ بزم
شمع تجھ بن ہوا سے لڑتی ہے
ذوق دنیا ہے مکر کا میداں
نگہ اس کی دغا سے لڑتی ہے
بہادر شاہ ظفر
ہم نے دنیا میں آ کے کیا دیکھا
دیکھا جو کچھ سو خواب سا دیکھا
ہے تو انسان خاک کا پُتلا
لیک پانی کا بلبلا دیکھا
نہ ہوئے تیری خاکِ پا، ہم نے
خاک میں آپ کو ملا دیکھا
ولہ
میں ہوں عاصی کہ پُر خطا کچھ ہوں
تیرا بندہ ہوں، اے خدا کچھ ہوں
سمجھے وہ اپنا خاکسار مجھے
خاکِ رہ ہوں کہ خاکِ پا کچھ ہوں
داغ دہلوی
ساز یہ کینہ ساز کیا جانیں
ناز والے نیاز کیا جانیں
جو رہِ عشق میں قدم رکھیں
وہ نشیب و فراز کیا جانیں
جو گزرتے ہیں داغ پر صدمے
آپ بندہ نواز کیا جانیں
ولہ
نا روا کہئے، نا سزا کہئے
کہئے کہئے مجھے بُرا کہئے
آپ کا خیر خواہ میرے سوا
ہے کوئی دوسرا کہئے
ہوش جاتے رہے رقیبوں کے
داغ کو اور بے وفا کہئے
ولہ
جالِ زُلفِ سیاہ نے مارا
تیرِ کافر نگاہ نے مارا
کھا گیا مغز ناصحِ ناداں
مجھکو اس خیر خواہ نے مارا
دیکھا اے داغ اہلِ دنیا کو
ہوسِ عزّ و جاہ نے مارا
ولہ
سبق ایسا پڑھا دیا تُو نے
دل سے سب کچھ بھلا دیا تُو نے
نارِ نمرود کو کیا گُل زار
دوست کو یوں بچا دیا تُو نے
داغ کو کون دینے والا تھا
جو دیا، اے خدا دیا تُو نے
ولہ
بات میری کبھی سُنی ہی نہیں
جانتے وہ بُری بھلی ہی نہیں
لطفِ مے تجھ سے کیا کہوں زاہد
ہائے کم بخت تُو نے پی ہی نہیں
داغ کیوں تم کو بے وفا کہتا
وہ شکایت کا آدمی ہی نہیں
ولہ
غم اٹھانے کے ہیں ہزار طریق
کہ زمانے کے ہیں ہزار طریق
داغ اب فاقہ مست بن بیٹھے
مانگ کھانے کے ہیں ہزار طریق
مولانا حالی
دھوم تھی اپنی پارسائی کی
کی بھی اور کس سے آشنائی کی
منہ کہاں تک چھپاؤ گے ہم سے
تم کو عادت ہے خود نمائی کی
دل بھی پہلو میں ہو تو یاں کس سے
رکھئے امّید دل ربائی کی
زندہ پھرنے کی ہے ہوس حالی
انتہا ہے یہ بے حیائی کی
ولہ
حق وفا کے جو ہم جتانے لگے
آپ کچھ کہہ کے مسکرانے لگے
سخت مشکل ہے شیوۂ تسلیم
ہم بھی آخر کو جی چرانے لگے
جی میں ہے، لُوں رضائے پیرِ مغاں
قافلے پھر حرم کو جانے لگے
اکبر الہ آبادی 
سانس لیتے ہوئے بھی ڈرتا ہوں
یہ نہ سمجھیں کہ آہ کرتا ہوں
شیخ صاحب خدا سے ڈرتے ہیں
میں تو انگریزوں ہی سے ڈرتا ہوں
یہ بڑا عیب مجھ میں ہے اکبر
دل میں جو آئے کہہ گزرتا ہوں
ولہ
اس میں عکس آپ کا اتاریں گے
دل کو اپنے یونہی سنواریں گے
پند اکبر کو دیں گے کیا ناصح
گل کو کیا باغباں سنواریں گے
حسرت موہانی
خوبرویوں سے یاریاں نہ گئیں
دل کی بے اختیاریاں نہ گئیں
دن کی صحرا نوردیاں نہ چھٹیں
شب کی اختر شماریاں نہ گئیں
طرزِ مومن میں مر جا حسرت
تیری رنگیں نگاریاں نہ گئیں
ولہ
نہ کیا بارِ غم کسی نے قبول
غیرِ انساں کہ تھا ظُلُوم و جہُول
بھیجئے تحفۂ درود و سلام
بجنابِ رسول و آلِ رسول
خاصہ بر روح پُر فتوح حسین
نورِ چشمِ علی و جانِ بتول
نوجوانانِ خلد کے سردار
گُلبنِ دوحۂ رسول کے پھول
ولہ
حور و غلماں پہ کیوں فدا ہوتے
اہلِ ظاہر جو پارسا ہوتے
کس قدر سہل ہے حصولِ بقا
دیر لگنی نہیں فنا ہوتے
ولہ
لطف کی اُن سے التجا نہ کریں
ہم نے ایسا کبھی کیا نہ کریں
مل رہے گا جو اُن سے ملنا ہے
لب کو شرمندۂ دعا نہ کریں
جگر مراد آبادی
آدمی آدمی سے ملتا ہے
دل مگر کم کسی سے ملتا ہے
بھول جاتا ہوں میں ستم اس کے
وہ کچھ اس سادگی سے ملتا ہے
سلسلہ فتنۂ قیامت کا
تیری خوش قامتی سے ملتا ہے
ولہ
عاشقی امتیاز کیا جانے
فرقِ ناز و نیاز کیا جانے
سینۂ نے پہ جو گزرتی ہے
وہ لبِ نے نواز کیا جانے
راہرو راہِ بے خودی ہے جگر
وہ نشیب و فراز کیا جانے
ولہ
عشق کو بے نقاب ہونا تھا
آپ اپنا جواب ہونا تھا
تیری آنکھوں کا کچھ قصور نہیں
ہاں مجھی کو خراب ہونا تھا
ہو چکا روزِ اوّلیں ہی جگر
جس کو جتنا خراب ہونا تھا
ولہ
پھر وہ ہم سے خفا ہے کیا کہیئے
زندگی بے حیا ہے کیا کہیئے
چاندنی ہے، ہوا ہے کیا کہیئے
مفلسی کیا بلا ہے کیا کہیئے
ولہ
زندگی ہے مگر پرائی ہے
مرگِ غیرت تری دہائی ہے
اس نے اپنا بنا کے چھوڑ دیا
کیا اسیری ہے، کیا رہائی ہے
فانی بدایونی
ضبط اپنا شعار تھا نہ رہا
دل پہ کچھ اختیار تھا نہ رہا
موت کا انتظار باقی ہے
آپ کا انتظار تھا نہ رہا
مہرباں یہ مزارِ فانی ہے
آپ کا جاں نثار تھا نہ رہا
ولہ
نظر آج ان سے رہ گئی مل کے
آخری کچھ پیام تھے دل کے
خاک ہے تو اُسی گلی کی خاک
اللہ اللہ یہ حوصلے دل کے
مرگِ فانی میں اب تُو دیر نہ کر
سہل فرمانے والے مشکل کے
ولہ
آپ سے شرحِ آرزو تو کریں
آپ تکلیفِ گفتگو تو کریں
وہ اُدھر، رخ اِدھر ہے میّت کا
لوگ فانی کو قبلہ رُو تو کریں
یگانہ چنگیزی
کس کی آواز کان میں آئی
دور کی بات دھیان میں آئی
علم کیا، علم کی حقیقت کیا
جیسی جس کے گمان میں آئی
بات ادھوری مگر اثر دونا
اچھی لکنت زبان میں آئی
میں پیمبر نہیں یگانہ سہی
کیا کمی اس سے شان میں آئی
ولہ
لذّتِ زندگی مبارک باد
کل کی کیا فکر ہر چہ بادا باد
دل سلامت ہے دردِ دل نہ سہی
درد جاتا رہا کہ درد کی یاد
صلح کر لو یگانہ غالب سے
وہ بھی استاد، تم بھی اک استاد
حفیظ جالندھری
دل ابھی تک جوان ہے پیارے
کس مصیبت میں جان ہے پیارے
میں تجھے بے وفا نہیں کہتا
دشمنوں کا بیان ہے پیارے
تیرے کوچے میں ہے سکوں ورنہ
ہر زمیں آسمان ہے پیارے
ولہ
کہہ گئے الفراق یارانے
رہ گئے نا تمام افسانے
ماتمِ اہلِ ظرف کے دن ہیں
اِحتراماً بند ہیں مے خانے
ہم نے روکا حفیظ کو ورنہ
اور بھی کچھ لگے تھے فرمانے
نوح ناروی
آپ جن کے قریب ہوتے ہیں
وہ بڑے خوش نصیب ہوتے ہیں
ظلم سہہ کر جو اُف نہیں کرتے
ان کے دل بھی عجیب ہوتے ہیں
نوح کی قدر کوئی کیا جانے
کہیں ایسے ادیب ہوتے ہیں
ولہ
آپ ہیں، ہم ہیں، مے ہے، ساقی ہے
یہ بھی ایک امرِ اتّفاقی ہے
بے پئے نام تک نہیں لیتا
مجھ کو یہ احترامِ ساقی ہے
اثر لکھنوی
جب نظر سوئے ذات جاتی ہے
تا محیطِ صفات جاتی ہے
ہستی ہوتی ہے اتنی ہی مبہم
جتنی بھی دور بات جاتی ہے
جس کو آنا ہے وہ نہیں آتا
رات آتی ہے رات جاتی ہے
زندگی کا اثر الم کیسا
شے تھی اک بے ثبات جاتی ہے
خمار بارہ بنکوی
ہنسنے والے اب ایک کام کریں
جشنِ گریہ کا اہتمام کریں
ہم بھی کر لیں جو روشنی گھر میں
پھر اندھیرے کہاں قیام کریں
اک گذارش ہے حضرتِ ناصح
آپ اب اور کوئی کام کریں
ہاتھ ہٹتا نہیں ہے دل سے خمار
ہم انھیں کس طرح سے سلام کریں
چراغ حسن حسرت
دل بلا سے نثار ہو جائے
آپ کو اعتبار ہو جائے
قہر تو بار بار ہوتا ہے
لطف بھی ایک بار ہو جائے
یا خزاں جائے اور بہار آئے
یا خزاں ہی بہار ہو جائے
دل پہ مانا کہ اختیار نہیں
اور اگر اختیار ہو جائے؟
جوش ملیح آبادی
ہٹ گئے دل سے تیرگی کے حجاب
آفریں اے نگاہِ عالم تاب
آڑے آیا نہ کوئی مشکل میں
مشورے دے کے ہٹ گئے احباب
جوش کھلتی تھی جن سے دل کی کلی
کیسے وہ لوگ ہو گئے نایاب
ولہ
جب گجر کی صدا جگاتی تھی
ہائے کچھ اور نیند آتی تھی
ہائے وہ زندگی نہیں ملتی
جب ہمیں روز موت آتی تھی
یاد سا ہے کہ اس خرابے میں
کبھی بَرکھا رُت بھی آتی تھی
جوش اب وہ قدم ہیں خاک آلود
جن پہ اکثر وہ سر جھکاتی تھی
فیض احمد فیض
آئے کچھ ابر، کچھ شراب آئے
اس کے بعد آئے جو عذاب آئے
بامِ مینا سے ماہتاب اترے
دستِ ساقی میں آفتاب آئے
کر رہا تھا غمِ جہاں کا حساب
آج تم یاد بے حساب آئے
فیض تھی راہ سر بسر منزل
ہم جہاں پہنچے کامیاب آئے
ولہ
شیخ صاحب سے رسم و راہ نہ کی
شکر ہے زندگی تباہ نہ کی
تجھ کو دیکھا تو سیر چشم ہوئے
تجھ کو چاہا تو اور چاہ نہ کی
تیرے دستِ ستم کا عجز نہیں
دل ہی کافر تھا جس نے آہ نہ کی
ولہ
عشق منّتِ کشِ قرار نہیں
حسن مجبورِ انتظار نہیں
اپنی تکمیل کر رہا ہوں میں
ورنہ تجھ سے تو مجھ کو پیار نہیں
فیض زندہ رہیں وہ ہیں تو سہی
کیا ہوا گر وفا شعار نہیں
ولہ
ہر حقیقت مجاز ہو جائے
کافروں کی نماز ہو جائے
عشق دل میں رہے تو رُسوا ہو
لب پہ آئے تو راز ہو جائے
عمر بے سُود کٹ رہی ہے فیض
کاش افشائے راز ہو جائے
ولہ
ہم نے سب شعر میں سنوارے تھے
ہم سے جتنے سخن تمھارے تھے
رنگ و خوشبو کے، حسن و خوبی کے
تم سے تھے جتنے استعارے تھے
عمر جاوید کی دعا کرتے
فیض اتنے وہ کب ہمارے تھے
ولہ
رازِ الفت چُھپا کے دیکھ لیا
دل بہت کچھ جلا کے دیکھ لیا
اور کیا دیکھنے کو باقی ہے
آپ سے دل لگا کے دیکھ لیا
فیض تکمیلِ غم بھی ہو نہ سکی
عشق کو آزما کے دیکھ لیا
ولہ
پھر حریفِ بہار ہو بیٹھے
جانے کس کس کو آج رو بیٹھے
تھی مگر اتنی رائگاں بھی نہ تھی
آج کچھ زندگی سے کھو بیٹھے
فیض ہوتا رہے جو ہونا ہے
شعر لکھتے رہا کرو بیٹھے
ناصر کاظمی
نیّتِ شوق بھر نہ جائے کہیں
تُو بھی دل سے اتر نہ جائے کہیں
آج دیکھا ہے تجھ کو دیر کے بعد
آج کا دن گزر نہ جائے کہیں
نہ ملا کر اداس لوگوں سے
حسن تیرا بکھر نہ جائے کہیں
آرزو ہے کہ تُو یہاں آئے
اور پھر عمر بھر نہ جائے کہیں
آؤ کچھ دیر رو ہی لیں ناصر
پھر یہ دریا اتر نہ جائے کہیں
ولہ
دل میں اک لہر سی اٹھی ہے ابھی
کوئی تازہ ہوا چلی ہے ابھی
شور برپا ہے خانۂ دل میں
کوئی دیوار سی گری ہے ابھی
بھری دنیا میں جی نہیں لگتا
جانے کس چیز کی کمی ہے ابھی
تم تو یارو ابھی سے اٹھ بیٹھے
شہر میں رات جاگتی ہے ابھی
وقت اچھا بھی آئے گا ناصر
غم نہ کر زندگی پڑی ہے ابھی
ساغر صدیقی
وہ بلائیں تو کیا تماشا ہو
ہم نہ جائیں تو کیا تماشا ہو
یہ کناروں سے کھیلنے والے
ڈوب جائیں تو کیا تماشا ہو
تیری صورت جو اتّفاق سے ہم
بھول جائیں تو کیا تماشا ہو
وقت کی چند ساعتیں ساغر
لوٹ آئیں تو کیا تماشا ہو
ولہ
چاندنی کو رسول کہتا ہوں
بات کو با اصول کہتا ہوں
جگمگاتے ہوئے ستاروں کو
تیرے پاؤں کی دھول کہتا ہوں
اتّفاقاً تمھارے ملنے کو
زندگی کا حصول کہتا ہوں
جب میّسر ہوں ساغر و مینا
برق پاروں کو پھول کہتا ہوں
ولہ
مُدّعا کچھ نہیں فقیروں کا
درد ہے لا دوا فقیروں کا
منزلوں کی خبر خدا جانے
عشق ہے راہنما فقیروں کا
میکدے کی حدود میں ہونگے
کیا بتائیں پتا فقیروں کا
ولہ
غم کے مجرم، خوشی کے مجرم ہیں
لوگ اب زندگی کے مجرم ہیں
دشمنی آپ کی عنایت ہے
ہم فقط دوستی کے مجرم ہیں
ہم فقیروں کی صورتوں پہ نہ جا
خدمتِ آدمی کے مجرم ہیں
احمد فراز
زندگی سے یہی گِلہ ہے مجھے
تُو بڑی دیر سے ملا ہے مجھے
تو محبّت سے کوئی چال تو چل
ہار جانے کا حوصلہ ہے مجھے
ہمسفر چاہیئے ہجوم نہیں
اک مسافر بھی قافلہ ہے مجھے
کوہکن ہو کہ قیس ہو کہ فراز
سب میں اِک شخص ہی ملا ہے مجھے
ولہ
جن کے دم سے تھیں بستیاں آباد
آج وہ لوگ ہیں کہاں آباد
ہم نے دیکھی ہے گوشۂ دل میں
ایک دنیائے بے کراں آباد
کتنے تارے فراز ٹوٹ چکے
ہے ابھی تک یہ خاکداں آباد
ولہ
جب ملاقات بے ارادہ تھی
اس میں آسودگی زیادہ تھی
نہ توقّع نہ انتظار نہ رنج
صبحِ ہجراں نہ شامِ وعدہ تھی
وہ بھی کیا دن تھے جب فراز اس سے
عشق کم عاشقی زیادہ تھی
ولہ
جان سے عشق اور جہاں سے گریز
دوستوں نے کیا کہاں سے گریز
میں وہاں ہوں جہاں جہاں تم ہو
تم کرو گے کہاں کہاں سے گریز
جنگ ہاری نہ تھی ابھی کہ فراز
کر گئے دوست درمیاں سے گریز
سیف الدین سیف
راہ آسان ہوگئی ہوگی
جان پہچان ہوگئی ہوگی
پھر پلٹ کر نگہ نہیں آئی
تجھ پہ قربان ہوگئی ہوگی
دل کی تسکین پوچھتے ہیں آپ
ہاں مری جان ہوگئی ہوگی
مرنے والوں پہ سیف حیرت کیوں
موت آسان ہوگئی ہوگی
ولہ
پھول اس خاکداں کے ہم بھی ہیں
مدّعی دو جہاں کے ہم بھی ہیں
کہہ رہا ہے سُکوتِ لالہ و گُل
زخم خوردہ زباں کے ہم بھی ہیں
ساتھ مثلِ غبار ہو لیں گے
منتظر کارواں کے ہم بھی ہیں
ولہ
روز غم آشکار ہوتے ہیں
کیا یہی رازدار ہوتے ہیں
کیا قیامت ہے ہجر کے دن بھی
زندگی میں شمار ہوتے ہیں
سیف اُمّید کے سہارے بھی
کتنے بے اعتبار ہوتے ہیں
منیر نیازی
خلشِ ہجرِ دائمی نہ گئی
تیرے رُخ سے یہ بے رُخی نہ گئی
پوچھتے ہیں کہ کیا ہُوا دل کو
حسن والوں کی سادگی نہ گئی
اور سب کی حکائتیں کہہ دیں
بات اپنی کبھی کہی نہ گئی
ہم بھی گھر سے منیر تب نکلے
بات اپنوں کی جب سہی نہ گئی
ولہ
اور ہیں کتنی منزلیں باقی
جان کتنی ہے جسم میں باقی
زندہ لوگوں کی بود و باش میں ہیں
مُردہ لوگوں کی عادتیں باقی
وہ تو آ کے منیر جا بھی چکا
اک مہک سی ہے باغ میں باقی
احمد ندیم قاسمی
اشک تھا، چشمِ تر کے کام آیا
میں بشر تھا، بشر کے کام آیا
سیم و زر آدمی کے چاکر تھے
آدمی سیم و زر کے کام آیا
فقر و فاقہ میں مر گیا شاعر
شعر، اہلِ نظر کے کام آیا
ولہ
دل نے صدمے بہت اٹھائے ہیں
آپ لیکن ابھی پرائے ہیں
آپ کیوں سامنے نہیں آتے
آپ کیوں روح میں سمائے ہیں
مختصر یہ ہے داستانِ حیات
پھول ڈھونڈے ہیں خار پائے ہیں
کہکشاں ہے غبارِ راہ ندیم
کس نے یہ راستے سُجھائے ہیں
ولہ
اس سے پہلے کہ حشر آنے لگے
کاش انسان مسکرانے لگے
ظلم صدیوں کے رنگ لانے لگے
وہ جو جلتے رہے، جلانے لگے
چاند پر جب سے لوگ جانے لگے
صرف پتھّر زمیں پہ لانے لگے
احسان دانش
اب کہو کارواں کدھر کو چلے
راستے کھو گئے چراغ جلے
عشق غم کو عبور کر نہ سکا
راستے کارواں کے ساتھ چلے
ہم پہ گزری ہیں ہجر کی راتیں
ہم جہنّم میں تھے مگر نہ جلے
ولہ
جو ترے آستاں سے لوٹ آئے
جنّتِ دو جہاں سے لوٹ آئے
بندگی کے مقام سے آگاہ
سرحدِ لامکاں سے لوٹ آئے
اب تو کعبے میں روشنی کر دو
اب تو کُوئے بتاں سے لوٹ آئے
ولہ
جب جوانی کی دھوپ ڈھلتی ہے
خود سری سر جھکا کے چلتی ہے
تجربہ ہے کہ دشمنی اکثر
دوستی کے لہو سے پلتی ہے
دورِ حاضر کی دوستی احسان
کس قدر جلد رُخ بدلتی ہے
راغب مراد آبادی
بزمِ ہستی میں روشنی کیسی
بجھ گیا دل تو زندگی کیسی
زندگی نام ہے محبّت کا
یہ نہیں ہے تو زندگی کیسی
آج میرے سیاہ خانے میں
اللہ اللہ روشنی کیسی
عبدالحمید عدم
بے سبب کیوں گناہ ہوتا ہے
فکرِ فردا گناہ ہوتا ہے
مجھ کو تنہا نہ چھوڑ کر جاؤ
یہ خلا بے پناہ ہوتا ہے
تجھ کو کیا دوسروں کے عیبوں سے
کیوں عبث روسیاہ ہوتا ہے
اُس گھڑی اُس سے مانگ لو سب کچھ
جب عدم بادشاہ ہوتا ہے
ولہ
عہدِ مستی ہے لوگ کہتے ہیں
مے پرستی ہے لوگ کہتے ہیں
غمِ ہستی خریدنے والو
موت سستی ہے لوگ کہتے ہیں
شاید اک بار اُجڑ کے پھر نہ بسے
دل کی بستی ہے لوگ کہتے ہیں
ولہ
جام کھنکے تو بات پیدا ہو
فرقِ موت و حیات پیدا ہو
پہلی دنیا خراب ہے یا رب
دوسری کائنات پیدا ہو
اور ابلیس اک مسلّط کر
تا کہ امن و ثبات پیدا ہو
بشیر بدر
پھول سا کچھ کلام اور سہی
اک غزل اس کے نام اور سہی
کرسیوں کو سنائیے غزلیں
قتل کی ایک شام اور سہی
ولہ
اس کی چاہت کی چاندنی ہوگی
خوب صورت سی زندگی ہوگی
نیند ترسے گی میری آنکھوں کو
جب بھی خوابوں سے دوستی ہوگی
ہم بہت دور تھے مگر تم نے
دل کی آواز تو سنی ہوگی
واصف علی واصف
سوز و ساز و سخن علی مولا
سایۂ ذوالمنن علی مولا
ردّ ِ رنج و محن علی مولا
زینتِ انجمن علی مولا
میرے من کی لگن علی مولا
رازِ خیبر شکن علی مولا
ولہ
رازِ دل آشکار آنکھوں میں
حشر کا انتظار آنکھوں میں
وہ بھی ہوگا کسی کا نورِ نظر
جو کھٹکتا ہے خار آنکھوں میں
رات کیسے بسر ہوئی واصف
دن کو کیوں ہے خمار آنکھوں میں
ولہ
دوستو، دوستی کا نام نہ لو
ہو چکی، دل لگی کا نام نہ لو
مار ڈالے گی شاعری واصف
بھول کر شاعری کا نام نہ لو
ولہ
کب اڑا لے گئی ہوا مت پوچھ
چار تنکوں کا ماجرا مت پوچھ
تُو نے جو کچھ کہا، تجھے معلوم
میں نے دنیا سے کیا سُنا، مت پوچھ
بے گناہی بھی جرم ہے واصف
اور اس جرم کی سزا مت پوچھ
پروین شاکر
زندگی سے نظر ملاؤ کبھی
ہار کے بعد مسکراؤ کبھی
ترکِ الفت کے بعد امیدِ وفا
ریت پر چل سکی ہے ناؤ کبھی
اندھے ذہنوں سے سوچنے والو
حرف میں روشنی ملاؤ کبھی
اپنے اسپین کی خبر رکھنا
کشتیاں تم اگر جلاؤ کبھی
ولہ
نیند تو خواب ہو گئی شاید
جنسِ نایاب ہو گئی شاید
ہجر کے پانیوں میں عشق کی ناؤ
کہیں غرقاب ہو گئی شاید
چند لوگوں کی دسترس میں ہے
زیست کم خواب ہو گئی شاید
حبیب جالب
شعر ہوتا ہے اب مہینوں میں
زندگی ڈھل گئی مشینوں میں
پیار کی روشنی نہیں ملتی
ان مکانوں میں، ان مکینوں میں
دیکھ کر دوستی کا ہاتھ بڑھاؤ
سانپ ہوتے ہیں آستینوں میں
وہ محبّت نہیں رہی جالب
ہم صفیروں میں، ہم نشینوں میں
عبدالعزیز خالد
خانہ برباد و گل بداماں ہے
عشق بارِ نشاطِ حرماں ہے
چور، منہ زور، بور، رشوت خور
دل برَہمن ہے، لب مسلماں ہے
انقلابات ہیں زمانے کے
خالدِ نظم گو، غزل خواں ہے
ولہ
شرم گرچہ ہے مانعِ گفتار
رنگِ چہرہ ہے کاشفِ اسرار
دل کا گھونگھٹ اٹھے تو جب جانیں
اے تہجّد گذار و شب بیدار
کب وہ دن آئے گا کہ جب ہوگا
کسی آزاد مرد کا دیدار
رئیس امروہوی
میں جو تنہا رہِ طلب میں چلا
ایک سایہ مرے عقب میں چلا
صبح کے قافلوں سے نبھ نہ سکی
میں اکیلا سوادِ شب میں چلا
میں کبھی حیرتِ طلب میں رکا
اور کبھی شدّتِ غضب میں چلا
ولہ
گرد میں اَٹ رہے ہیں احساسات
دھیمے دھیمے برس رہی ہے رات
صبح جاگا تو یاد بھی نہ رہا
رات تھی چاندنی کہ چاندنی رات
کیا یہی ہے رئیس امروہی؟
اُڑ کے آئے ہیں دُور سے ذرّات
جون ایلیا
عمر گزرے گی امتحان میں کیا
داغ ہی دیں گے مجھ کو دان میں کیا
میری ہر بات بے اثر ہی رہی
نقص ہے کچھ مرے بیان میں کیا
مجھ کو تو کوئی ٹوکتا بھی نہیں
یہی ہوتا ہے خاندان میں کیا
یہ مجھے چین کیوں نہیں پڑتا
ایک ہی شخص تھا جہان میں کیا
ولہ
ایک ہی مژدہ صبح لاتی ہے
صحن میں دھوپ پھیل جاتی ہے
کیا ستم ہے کہ اب تری صورت
غور کرنے پہ یاد آتی ہے
سوچتا ہوں کہ اس کی یاد آخر
اب کسے رات بھر جگاتی ہے
کون اس گھر کی دیکھ بھال کرے
روز اک چیز ٹوٹ جاتی ہے
صہبا اختر
فردِ عصیاں کو وہ سیاہی دے
جس کی وہ زلف بھی گواہی دے
دل کے اجڑے نگر کو کر آباد
اس ڈگر کو بھی کوئی راہی دے
مجھ کو نانِ جویں بنامِ علی
میرے دشمن کو مرغ و ماہی دے
مجرمِ عشق ہوں، مجھے صہبا
جو سزا دے وہ بے گناہی دے
---------
کتابیات
حصۂ اول
1-بحر الفصاحت، مولوی نجم الغنی رامپوری، حصہ دوم علمِ عروض۔ مرتب سید قدرت نقوی۔ مجلسِ ترقی ادب، لاہور۔ 2001
 
2 - A practical handbook of Urdu Meter, F.W. Pritchett and Kh.A. Khaliq (online version).
 
حصۂ دوم
1- نقوش غزل نمبر۔ ادارۂ فروغِ اردو، لاہور۔ اکتوبر 1985
2- نقوش میر تقی میر نمبر۔ ادارۂ فروغِ اردو، لاہور۔ اکتوبر 1980
3-بیسویں صدی کی اردو شاعری۔ مرتب اوصاف احمد۔ بُک ہوم، لاہور۔ ستمبر 2003
4- البم، مرتب آغا ذوالفقار خان۔ الحمد پبلی کیشنز، لاہور۔ اکتوبر 1992
5-جب میرا انتخاب نکلے، مرتب محمد آصف بھلی۔ عمر پبلشرز، سیالکوٹ۔ ستمبر 1995
6- غزل در غزل، مرتب یوسف مثالی۔ جہانگیر بُک ڈپو، لاہور۔ 1990
7- احمد فراز سے وصی شاہ تک، مرتب حسن عباسی۔ نستعلیق مطبوعات، لاہور۔ جنوری 2005
8- ساحر لدھیانوی سے بشیر بدر تک، مرتب سید امتیاز احمد۔ نستعلیق مطبوعات، جنوری 2005
9- نسخہ ہائے وفا، فیض احمد فیض۔ مکتبہ کارواں، لاہور۔
10- کلیاتِ احمد فراز، ماورا پبلشرز، لاہور
11- کلیات منیر نیازی، ماورا پبلشرز، لاہور
12- ندیم کی غزلیں، احمد ندیم قاسمی۔ سنگِ میل، لاہور۔ 1991
13- کلیات ساغر صدیقی، مشتاق بُک کارنر، لاہور
14- خم کاکل، سیف الدین سیف۔ الحمد پبلی کیشنز، لاہور، اپریل 1992
15- خوشبو، پروین شاکر۔ مراد پبلی کیشنز، اسلام آباد
16- شب چراغ، واصف علی واصف۔ کاشف پبلی کیشنز، لاہور۔ اکتوبر 1994
17- رسوائی نقاب، عبدالحمید عدم۔ آئینۂ ادب، لاہور
18- دواوین شعرائے کرام (ولی دکنی، میر تقی میر، میر درد، آتش، مصحفی، غالب، مومن، ذوق، بہادر شاہ ظفر، داغ، حسرت موہانی، اکبر الہ آبادی، جگر مراد آبادی، ساحر لدھیانوی)