میری شاعری

آپ کی شائع شدہ شاعری

اس سیکشن میں اپنی شاعری کیسے شائع کریں؟

#موزوں غزل

19 اکتوبر 2017


ان کے بن جینا بھی مشکل لگتا ہے
اب اپنا سایہ بھی قاتل لگتا ہے
جس کو پانا کافی مشکل لگتا ہے
وہ تو میری زیست کا حاصل لگتا ہے
مزید دکھائیں
#موزوں غزل (سنِ تخلیق: 1998)

19 اکتوبر 2017


اُس زلفِ ناصیہ پہ جب سے نظر رکھی ہے
صحرا میں گھٹا اک چھانے کی خبر رکھی ہے
اِس طرح سے جہاں میں اپنی گزر رکھی ہے
پلکوں پہ برسوں کی یہ گردِ سفر رکھی ہے
مزید دکھائیں
#موزوں بہار ہوئی ناآشنا

19 اکتوبر 2017


وجود پر اترئی ہے خزاں
بہار ہوئی ناآشنا
امیدِ بہار اب نہیں
اتنا ہی ہے اب منزل نشاں
#موزوں غزل

19 اکتوبر 2017


تمھیں ہے یاد کہاں چھوڑ کر گئے تھے تم
یہاں کھڑے تھے یہاں چھوڑ کر گئے تھے تم
پڑا ہوا ہوں اُسی پیڑ ہی کے سائے میں
شجر کے پاس جہاں چھوڑ کر گئے تھے تم
مزید دکھائیں
#موزوں غزل

19 اکتوبر 2017


اپنی تقدیر پھر آزمائیں گے ہم
انکے کوچے سے واپس نہ جائیں گے ہم
ظلم کتنے ہی ڈھا لے ستم گار تو
غم کے ہر دور میں مسکرا ئیں گے ہم
مزید دکھائیں
#موزوں غزل

19 اکتوبر 2017


اپنی تقدیر پھر آزمائیں گے ہم
انکے کوچے سے واپس نہ جائیں گے ہم
ظلم کتنے ہی ڈھا لے ستم گار تو
غم کے ہر دور میں مسکرا ئیں گے ہم
مزید دکھائیں
#موزوں غزل.

19 اکتوبر 2017


نگاہوں میں کوئی منظر نہیں ہے
کسی کے غم میں دل مضطر نہیں ہے
بڑی مشکل سے سمجھایا ہے دل کو
کہ شیشہ ہے کوئی پتّھر نہیں ہے
مزید دکھائیں
#موزوں Deewali

18 اکتوبر 2017


چراغاں ہے ہر اک آنگن ہے دیوالی کی شب آئی
خوشی سے کیوں نہ جھومے من ہے دیوالی کی شب آئی
اُتر آئے ہیں دھرتی پر سِتارے آسمانوں کے
زمیں سج کر بنی دولہن ہے دیوالی کی شب آئی
مزید دکھائیں
#موزوں رابطہ

18 اکتوبر 2017


آپ سے جب ہے تعلق رابطہ
ہے ہوا میں کیوں معلق رابطہ
رابطے کچھ ہیں مخالف بھی مگر
آپ کا ہی ہے موافق رابطہ
#موزوں ہے دیوالی کی شب آئی

18 اکتوبر 2017


چراغاں ہے ہر اک آنگن ہے دیوالی کی شب آئی
زمیں سج کر بنی دولہن ہے دیوالی کی شب آئی
اُتر آئے ہیں دھرتی پر سِتارے آسمانوں کے
خوشی سے کیوں نہ جھومے من ہے دیوالی کی شب آئی
مزید دکھائیں
#موزوں دیکھ رہا ہوں

18 اکتوبر 2017


غنچوں کے چٹخنے کا مزا دیکھ ریا ہوں
آغوش میں پلنے کی جزا دیکھ رہا ہوں
جھونکوں نے شگوفوں کوگلستان بنایا
منظر کو بدلنے کی ہوا دیکھ رہا ہوں
مزید دکھائیں
#موزوں دوستو

18 اکتوبر 2017


آتی بہت ہی یاد ، تمہاری ہے دوستو
قسمت سے ہم پہ وقت یہ بھاری ہے دوستو
جس کے بغیر شام بھی گزری نہ تھی کبھی
اس کے بغیر عید گزاری ہے دوستو
#موزوں اداس

18 اکتوبر 2017


ہم کو بھی کچھ کمی غموں کی نہیں
مانا خوشیاں ہیں تیرے پاس بہت
کیسی افتاد آئی اب کے برس
عید کا چاند تھا اداس بہت
#موزوں قدرت کے نظارے

18 اکتوبر 2017


حُسن بکھڑا ہے چاروں طرف جہاں جہاں دیکھو
پربتوں یا وادی کو یا یہ آسماں دیکھو
بات ہے یہ تو تیری حُسن آشنائی کی
دیکھو چاند سورج کو یا یہ کہکشاں دیکھو
مزید دکھائیں
#موزوں غزل ۔ رابطے پھر بحال کرتے ہیں

18 اکتوبر 2017


رابطے پھر بحال کرتے ہیں
یک نظر عرضِ حال کرتے ہیں
خوابِ فرصت میں پھر چلے آؤ
ہجر کے دن وصال کرتے ہیں
مزید دکھائیں
#موزوں دو شعر

17 اکتوبر 2017


کبھی ایسے کہ گہری نیند سے سوتے ہوئے توقیر
اچانک جاگ اٹھتا ہے تو اس کی اک وجہ تم ہو
کبھی گل توڑ کر شاخوں سے یوں ہی بے خیالی میں
کوئی پتی مسلتا ہے تو اس کی اک وجہ تم ہو
#موزوں سگرٹ

17 اکتوبر 2017


مری سگرٹ سمجھ سوتن تھی اس کی
مری ہر بات اس پر منکشف تھی
یوں ہر خامی مری اس پر عیاں تھی
وہ پھر بھی خوبیوں کی معترف تھی
#موزوں کسک

17 اکتوبر 2017


اسے بھی شاعری سے کچھ شغف تھا
یہی اک بات ہم میں مُشترک تھی
ہمارا ربط , باہم درد کا تھا
اُسی کی دین تھی جو بھی "کسک" تھی