کلام صنف
آج بازار میں پابجولاں چلو نظم
اس وقت تو یُوں لگتا ہے​ نظم
ہم کہ ٹہرے اجنبی اتنی مداراتوں کے بعد غزل
دربار میں اب سطوتِ شاہی کی علامت​ غزل
گلوں میں رنگ بھرے، بادِ نو بہار چلے غزل
زنداں کی ایک شام نظم
رات یوں دل میں تری کھوئی ہوئی یاد آئی نظم
ستم سکھلائے گا رسمِ وفا، ایسے نہیں ہوتا غزل
آج اک حرف کو پھر ڈھونڈتا پھرتا ہے خیال نظم
گل ہوئی جاتی ہے افسردہ سلگتی ہوئی شام نظم
میرے دل میرے مسافر آزاد نظم
ہجر کی راکھ اور وصال کے پھول​ نظم
تجھے پکارا ہے بے ارادہ غزل
وہ بتوں نے ڈالے ہیں وسوسے کہ دلوں سے خوفِ خدا گیا غزل
میرے ملنے والے​ نظم
نہ گنواؤ ناوکِ نیم کش، دلِ ریزہ ریزہ گنوا دیا غزل
یوں سجا چاند کہ جھلکا ترے انداز کا رنگ غزل
بے دم ہوئے بیمار دوا کیوں‌ نہیں ‌دیتے غزل
لہو کا سراغ​ نظم
یہاں سے شہر کو دیکھو تو حلقہ در حلقہ غزل
غم نہ کر، غم نہ کر آزاد نظم
کس حرف پہ تو نے گوشۂ لب اے جانِ جہاں غماز کیا غزل
کیے آرزو سے پیماں جو مآل تک نہ پہنچے غزل
نہ کسی پہ زخم عیاں کوئی، نہ کسی کو فکر رفو کی ہے غزل
خورشیدِ محشر کی لو نظم
فرشِ نومیدیِ دیدار نظم
جرسِ گُل کی صدا نظم
دل رہینِ غمِ جہاں ہے آج قطعہ
گو سب کو بہم ساغر و بادہ تو نہیں تھا​ غزل
تنہائی نظم
صبحِ آزادی نظم