اس وقت تو یُوں لگتا ہے​ (نظم)
اس وقت تو یوں لگتا ہے اب کچھ بھی نہیں ہے​
مہتاب نہ سورج، نہ اندھیرا نہ سویرا​
آنکھوں کے دریچوں پہ کسی حسن کی چلمن​
اور دل کی پناہوں میں کسی درد کا ڈیرا​
ممکن ہے کوئی وہم تھا، ممکن ہے سنا ہو​
گلیوں میں کسی چاپ کا اک آخری پھیرا​
شاخوں میں خیالوں کے گھنے پیڑ کی شاید​
اب آ کے کرے گا نہ کوئی خواب بسیرا​
اک بَیر، نہ اک مہر، نہ اک ربط نہ رشتہ​
تیرا کوئی اپنا، نہ پرایا کوئی میرا​
مانا کہ یہ سنسان گھڑی سخت کڑی ہے​
لیکن مرے دل یہ تو فقط اک ہی گھڑی ہے​
ہمت کرو جینے کو تو اک عمر پڑی ہے​
اشعار کی تقطیع
تبصرے