دل تھا ، کہ جو جانِ دردِ تمہید سہی (رباعی)
دل تھا ، کہ جو جانِ دردِ تمہید سہی
بیتابئ رشک و حسرتِ دید سہی
ہم اور فُسُردن اے تجلی افسوس
تکرار روا نہیں تو تجدید سہی
اشعار کی تقطیع
تبصرے