حق شہ کی بقا سے خلق کو شاد کرے (رباعی)
حق شہ کی بقا سے خلق کو شاد کرے
تا شاہ شیوعِ دانش و داد کرے
یہ جو دی گئی ہے رشتۂ عمر میں گانٹھ
ہے صِفر کہ افزائشِ اعداد کرے
اشعار کی تقطیع
تبصرے