جو مثلِ دوست، عدو کو بھی سرفراز کرے​ (غزل)
جو مثلِ دوست، عدو کو بھی سرفراز کرے​
اُس آدمی کی خدا زندگی دراز کرے​
وہ کج نہاد ہے آدم کا ناخلف فرزند​
میانِ کافر و مومن جو امتیاز کرے​
زمانہ شحنۂ سلطاں سے کاش یہ کہہ دے​
کہ آہِ گوشہ نشیناں سے احتراز کرے​
جسے ہو ایک توانائیِ عظیم کی دھن​
وہ کیا پرستشِ معبودِ خانہ ساز کرے​
مری دعا ہے کہ اے تاج دارِ ہفت اقلیم​
خدا تجھے بھی مری طرح بے نیاز کرے​
گزر چکا ہوں مقاماتِ آہ و شیون سے​
زمانہ اب تو درِ چنگ و عود باز کرے​
بچھے ہوئے ہیں دل و دیدہ اس تمنا میں​
کہ ایک روز وہ مشقِ خرامِ ناز کرے​
ہتھیلیوں پہ لیے سر کھڑے ہیں اہلِ حرم​
کہ کب وہ دیر نشیں عزمِ ترکتاز کرے​
دیارِ حرف و حکایت میں زلزلے آ جائیں​
اگر وہ لرزشِ مژگاں سے کشفِ راز کرے​
بساطِ کیف پہ رقصاں ہوں انفس و آفاق​
جو مشقِ زمزمہ وہ چشمِ نیم باز کرے​
وہ بندۂ متکبر ہے جوشِ طرفہ مزاج​
جو قدسیوں کو جھڑک دے، خدا سے ناز کرے​
اشعار کی تقطیع
تبصرے