حسن کوزہ گر نمبر 2 (آزاد نظم)
اے جہاں زاد، ​نشاط اس شبِ بے راہ روی کی​
میں کہاں تک بھولوں؟​
زور ِ مَے تھا،
کہ مرے ہاتھ کی لرزش
تھی ​کہ اس رات کوئی جام گرا ٹوٹ گیا
تجھے حیرت نہ ہوئی!​
کہ ترے گھر کے دریچوں کے کئ شیشوں پر​
اس سے پہلے کی بھی درزیں تھیں بہت
تجھے حیرت نہ ہوئی!​
اے جہاں زاد،​ میں کوزوں کی طرف، اپنے تغاروں کی طرف​
اب جو بغداد سے لوٹا ہوں،​
تو مَیں سوچتا ہوں
سوچتا ہوں تو مرے سامنے آئینہ رہی​
سر ِ بازار، دریچے میں، سر ِبستر ِ سنجاب کبھی ​
تو مرے سامنے آئینہ رہی،​
جس میں کچھ بھی نظر آیا نہ مجھے​
اپنی ہی صورت کے سوا​
اپنی تنہائی ِ جانکاہ کی دہشت کے سوا!​
لکھ رہا ہوں تجھے خط​
اور وہ آئینہ مرے ہاتھ میں ہے ​
اِس میں کچھ بھی نظر آتا نہیں​
اب ایک ہی صورت کے سوا!​
لکھ رہا ہوں تجھے خط​
اور مجھے لکھنا بھی کہاں آتا ہے؟​
لوح آئینہ پہ اشکوں کی پھواروں ہی سے ​
خط کیوں نہ لکھوں؟​
اے جہاں زاد،​
نشاط اس شبِ بے راہ روی کی​
مجھے پھر لائے گی؟​
وقت کیا چیز ہے تو جانتی ہے؟​
وقت اِک ایسا پتنگا ہے ​
جو دیواروں پہ آئینوں پہ، ​
پیمانوں پہ شیشوں پہ،​
مرے جام و سبو، میرے تغاروں پہ​
سدا رینگتا ہے​
رینگتے وقت کے مانند کبھی​
لوٹ آئے گا حَسَن کوزہ گر ِ سوختہ جاں بھی شاید!​
اب جو لوٹا ہوں جہاں زاد،​
تو میں سوچتا ہوں:
شاید اس جھونپڑے کی چھت پہ یہ مکڑی مری محرومی کی
جسے تنتی چلی جاتی ہے، وہ جالا تو نہیں ہوں مَیں بھی​
یہ سیہ جھونپڑا مَیں جس میں پڑا سوچتا ہوں​
میرے افلاس کے روندے ہوئے اجداد کی​
بس ایک نشانی ہے یہی​
ان کے فن، ان کی معیشت کی کہانی ہے یہی​
مَیں جو لوٹا ہوں تو وہ سوختہ بخت ​
آکے مجھے دیکھتی ہے ​
دیر تک دیکھتی رہ جاتی ہے​
میرے اس جھونپڑے میں کچھ بھی نہیں
کھیل اِک سادہ محبّت کا ​
شب و روز کے اِس بڑھتے ہوئے کھوکلے پن میں جو کبھی ​
کھیلتے ہیں​
کبھی رو لیتے ہیں مل کر، کبھی گا لیتے ہیں، ​
اور مل کر کبھی ہنس لیتے ہیں​
دل کے جینے کے بہانے کے سوا
حرف سرحد ہیں، جہاں زاد، معانی سرحد​
عشق سرحد ہے، جوانی سرحد​
اشک سرحد ہیں، تبسّم کی روانی سرحد​
دل کے جینے کے بہانے کے سوا اور نہیں
دردِ محرومی کی،​
تنہائی کی سرحد بھی کہیں ہے کہ نہیں؟)
میرے اِس جھونپڑے میں کتنی ہی خوشبوئیں ہیں​
جو مرے گرد سدا رینگتی ہیں​
اسی اِک رات کی خوشبو کی طرح رینگتی ہیں
در و دیوار سے لپٹی ہوئی اِس گرد کی خوشبو بھی ہے ​
میرے افلاس کی، تنہائی کی، ​
یادوں، تمنّاؤں کی خوشبو ئیں بھی،​
پھر بھی اِس جھونپڑے میں کچھ بھی نہیں
یہ مرا جھونپڑا تاریک ہے، گندہ ہے، پراگندہ ہے​
ہاں، کبھی دور درختوں سے پرندوں کے صدا آتی ہے​
کبھی انجیروں کے، زیتونوں کے باغوں کی مہک آتی ہے​
تو مَیں جی اٹھتا ہوں​
تو مَیں کہتا ہوں کہ لو آج نہا کر نکلا!​
ورنہ اِس گھر میں کوئی سیج نہیں، عطر نہیں ہے،​
کوئی پنکھا بھی نہیں،​
تجھے جس عشق کی خو ہے​
مجھے اس عشق کا یارا بھی نہیں!​
تو ہنسے گی، اے جہاں زاد، عجب بات​
کہ جذبات کا حاتم بھی مَیں​
اور اشیا کا پرستار بھی مَیں​
اور ثروت جو نہیں اس کا طلب گار بھی مَیں!​
تو جو ہنستی رہی اس رات تذبذب پہ مرے​
میری دو رنگی پہ پھر سے ہنس دے!​
عشق سے کس نے مگر پایا ہے کچھ اپنے سوا؟​
اے جہاں زاد، ​
ہے ہر عشق سوال ایسا کہ عاشق کے سوا​
اس کا نہیں کوئی جواب​
یہی کافی ہے کہ باطن کے صدا گونج اٹھے!​
اے جہاں زاد ​
مرے گوشۂ باطن کی صدا ہی تھی​
مرے فن کی ٹھٹھرتی ہوئی صدیوں​
کے کنارے گونجی​
تیری آنکھوں کے سمندر کا کنارا ہی تھا​
صدیوں کا کنارا نکلا​
یہ سمندر جو مری ذات کا آئینہ ہے​
یہ سمندر جو مرے کوزوں کے بگڑے ہوئے،​
بنتے ہوئے سیماؤں کا آئینہ ہے​
یہ سمندر جو ہر اِک فن کا​
ہر اِک فن کے پرستار کا ​
آئینہ ہے​
اشعار کی تقطیع
تبصرے