سیماب پشت گرمیِ آئینہ دے ہے ہم (قطعہ)
سیماب پشت گرمیِ آئینہ دے ہے ہم
حیراں کیے ہوئے ہیں دلِ بے قرار کے
آغوشِ گل کشودہ برائے وداع ہے
اے عندلیب چل! کہ چلے دن بہار کے
اشعار کی تقطیع
تبصرے