ہر قدم دوریٔ منزل ہے نمایاں مجھ سے (غزل)
ہر قدم دوریٔ منزل ہے نمایاں مجھ سے
میری رفتار سے بھاگے ہے ، بیاباں مجھ سے
درسِ عنوانِ تماشا ، بہ تغافل خوش تر
ہے نگہ رشتۂ شیرازۂ مژگاں مجھ سے
وحشتِ آتشِ دل سے ، شبِ تنہائی میں
صورتِ دود ، رہا سایہ گریزاں مجھ سے
غمِ عشاق نہ ہو ، سادگی آموزِ بتاں
کس قدر خانۂ آئینہ ہے ویراں مجھ سے
اثرِ آبلہ سے ، جادۂ صحرائے جنوں
صورتِ رشتۂ گوہر ہے چراغاں مجھ سے
بے خودی بسترِ تمہیدِ فراغت ہو جو!
پر ہے سایے کی طرح ، میرا شبستاں مجھ سے
شوقِ دیدار میں ، گر تو مجھے گردن مارے
ہو نگہ ، مثلِ گُلِ شمع ، پریشاں مجھ سے
بے کسی ہائے شبِ ہجر کی وحشت ، ہے ہے!
سایہ خورشیدِ قیامت میں ہے پنہاں مجھ سے
گردشِ ساغرِ صد جلوۂ رنگیں ، تجھ سے
آئینہ داریٔ یک دیدۂ حیراں ، مجھ سے
نگہِ گرم سے ایک آگ ٹپکتی ہے ، اسدؔ!
ہے چراغاں ، خس و خاشاکِ گلستاں مجھ سے
اشعار کی تقطیع
تبصرے