کرے ہے بادہ ، ترے لب سے ، کسبِ رنگِ فروغ (غزل)
کرے ہے بادہ ، ترے لب سے ، کسبِ رنگِ فروغ
خطِ پیالہ ، سراسر نگاہِ گل چیں ہے
کبھی تو اِس سرِ شوریدہ کی بھی داد ملے!
کہ ایک عمر سے حسرت پرستِ بالیں ہے
بجا ہے ، گر نہ سنے ، نالہ ہائے بلبلِ زار
کہ گوشِ گل ، نمِ شبنم سے پنبہ آگیں ہے
اسدؔ ہے نزع میں ، چل بے وفا ! برائے خدا!
مقامِ ترکِ حجاب و وداعِ تمکیں ہے
اشعار کی تقطیع
تبصرے