آفت آہنگ ہے کچھ نالۂ بلبل ورنہ (غزل)
آفت آہنگ ہے کچھ نالۂ بلبل ورنہ
پھول ہنس ہنس کے گلستاں میں فنا ہو جاتا
کاش ناقدر نہ ہوتا ترا اندازِ خرام
میں غبارِ سرِ دامانِ فنا ہو جاتا
یک شبہ فرصتِ ہستی ہے اک آئینۂ غم
رنگِ گل کاش! گلستاں کی ہَوا ہو جاتا
مستقل مرکزِ غم پہ ہی نہیں تھے ورنہ
ہم کو اندازۂ آئینِ فنا ہو جاتا
دستِ قدرت ہے مرا خشت بہ دیوارِ فنا
گر فنا بھی نہ میں ہوتا تو فنا ہو جاتا
حیرت اندوزیِ اربابِ حقیقت مت پوچھ
جلوہ اک روز تو آئینہ نما ہو جاتا
اشعار کی تقطیع
تبصرے