دعوۂ عشقِ بتاں سے بہ گلستاں گل و صبح (غزل)
دعوۂ عشقِ بتاں سے بہ گلستاں گل و صبح
ہیں رقیبانہ بہم دست و گریباں گل و صبح
ساقِ گلرنگ سے اور آئنۂ زانو سے
جامہ زیبوں کے سدا ہیں تہِ داماں گل و صبح
وصلِ آئینہ رخاں ہم نفسِ یک دیگر
ہیں دعا ہائے سحر گاہ سے خواہاں گل و صبح
آئنہ خانہ ہے صحنِ چمنستاں تجھ سے
بسکہ ہیں بے خود و وارفتہ و حیراں گل و صبح
زندگانی نہیں بیش از نفسِ چند اسدؔ
غفلت آرامیِ یاراں پہ ہیں خنداں گل و صبح
اشعار کی تقطیع
تبصرے