ضبط سے مطلب بجز وارستگی دیگر نہیں (غزل)
ضبط سے مطلب بجز وارستگی دیگر نہیں
دامنِ تمثال آبِ آئنہ سے تر نہیں
ہوتے ہیں بے قدر در کنجِ وطن صاحب دلاں
عزلت آبادِ صدف میں قیمتِ گوہر نہیں
باعثِ ایذا ہے برہم خوردنِ بزمِ سرور
لخت لختِ شیشۂ بشکستہ جز نشتر نہیں
واں سیاہی مردمک ہے اور یاں داغِ شراب
مہ حریفِ نازشِ ہم چشمیِ ساغر نہیں
ہے فلک بالا نشینِ فیضِ خم گر دیدنی
عاجزی سے ظاہرا رتبہ کوئی برتر نہیں
دل کو اظہارِ سخن اندازِ فتح الباب ہے
یاں صریرِ خامہ غیر از اصطکاکِ در نہیں
کب تلک پھیرے اسدؔ لب ہائے تفتہ پر زباں
طاقتِ لب تشنگی اے ساقیِ کوثر نہیں
اشعار کی تقطیع
تبصرے