تا ہم کو شکایت کی بھی باقی نہ رہے جا (قطعہ)
تا ہم کو شکایت کی بھی باقی نہ رہے جا
سن لیتے ہیں گو ذکر ہمارا نہیں کرتے
غالبؔ ترا احوال سنا دیں گے ہم ان کو
وہ سن کے بلا لیں یہ اجارا نہیں کرتے
اشعار کی تقطیع
تبصرے