رحم کر ظالم کہ کیا بودِ چراغِ کشتہ ہے (قطعہ)
رحم کر ظالم کہ کیا بودِ چراغِ کشتہ ہے
نبضِ بیمارِ وفا دودِ چراغِ کشتہ ہے
دل لگی کی آرزو بے چین رکھتی ہے ہمیں
ورنہ یاں بے رونقی سودِ چراغِ کشتہ ہے
اشعار کی تقطیع
تبصرے