فارغ مجھے نہ جان کہ مانندِ صبح و مہر (قطعہ)
فارغ مجھے نہ جان کہ مانندِ صبح و مہر
ہے داغِ عشق، زینتِ جیبِ کفن ہنوز
ہے نازِ مفلساں "زرِ از دست رفتہ" پر
ہوں "گل فروشِ شوخئ داغِ کہن" ہنوز
مے خانۂ جگر میں یہاں خاک بھی نہیں
خمیازہ کھینچے ہے بتِ بیدادِ فن ہنوز
اشعار کی تقطیع
تبصرے