بیمِ رقیب سے نہیں کرتے وداعِ ہوش (غزل)
بیمِ رقیب سے نہیں کرتے وداعِ ہوش
مجبور یاں تلک ہوئے اے اختیار ، حیف !
جلتا ہے دل کہ کیوں نہ ہم اِک بار جل گئے
اے نا تمامیِ نَفَسِ شعلہ بار حیف !
اشعار کی تقطیع
تبصرے