متاعِ بے بہا ہے درد و سوزِ آرزو مندی​ (غزل)
متاعِ بے بہا ہے درد و سوزِ آرزو مندی​
مقامِ بندگی دے کر نہ لوں شانِ خداوندی​
​ترے آزاد بندوں کی نہ یہ دنیا ، نہ وہ دنیا​
یہاں مرنے کی پابندی ، وہاں جینے کی پابندی​
​حجاب اکسیر ہے آوارۂ کوئے محبت کو​
مری آتش کو بھڑکاتی ہے تیری دیر پیوندی​
​گزر اوقات کر لیتا ہے یہ کوہ و بیاباں میں​
کہ شاہیں کے لیے ذلت ہے کارِ آشیاں بندی​
​یہ فیضانِ نظر تھا یا کہ مکتب کی کرامت تھی​
سکھائے کس نے اسمعیل کو آدابِ فرزندی​
​زیارت گاہِ اہلِ عزم و ہمت ہے لحد میری​
کہ خاکِ راہ کو میں نے بتایا راز الوندی​
​مری مشاطگی کی کیا ضرورت حسنِ معنی کو​
کہ فطرت خود بخود کرتی ہے لالے کی حنا بندی​
اشعار کی تقطیع
تبصرے