ڈوبتے کی پکار (نظم)
کل فکر یہ تھی کشورِ اسرار کہاں ہے​
اب ڈھونڈ رہا ہوں کہ درِ یار کہاں ہے​
پھر حُسن کے بازار میں بکنے کو چلا ہوں​
اے جنسِ تدبر کے خریدار کہاں ہے​
​پھر روگ لگایا ہے مرے دل کو کسی نے​
اے چارہ گرِ خاطرِ بیمار کہاں ہے​
​پھر بر سرِ تخریب ہے اک جلوۂ کافر​
اے کعبۂ حکمت کے نگہ دار کہاں ہے​
​ہنگامہ ہے پھر دل میں بپا سود و زیاں کا​
اے تجربۂ اندک و بسیار کہاں ہے​
​پھر عشق کے خورشید کی سر پر ہے کڑی دھوپ​
اے عقل، ترا سایۂ دیوار کہاں ہے​
​پھر مائلِ دریوزہ ہے خود داریِ شاعر​
اے جزر و مدِ غیرتِ فنکار کہاں ہے​
​پھر چرخِ تفکر پہ ہیں زلفوں کی گھٹائیں​
اے فاتحِ اقلیمِ شبِ تار کہاں ہے​
​پھر خواب کے گرداب میں غلطاں ہے دلِ زار​
اے کشتیِ اندیشۂ بیدار کہاں ہے​
​راتوں کے اندھیروں میں ہے پھر اشک فشانی​
اے روشنیِ طبعِ گہربار کہاں ہے​
​ادراک سے پھر عشق بغاوت پہ ہے طیار​
اے فکر کی چلتی ہوئی تلوار کہاں ہے​
​پایل کے کھنکنے میں ہے پھر دعوتِ زنجیر​
اے بربطِ اطلاق کی جھنکار کہاں ہے​
​پھر خون میں غلطیدہ ہے زیرِ لب و رخسار​
اے قاطعِ زہرِ لب و رخسار کہاں ہے​
​آوارہ ہے پھر دشت و بیاباں میں دلِ جوش​
اے تمکنتِ گوشۂ افکار کہاں ہے​
کل فکر یہ تھی کشورِ اسرار کہاں ہے​
اب ڈھونڈ رہا ہوں کہ درِ یار کہاں ہے​
​پھر حُسن کے بازار میں بکنے کو چلا ہوں​
اے جنسِ تدبر کے خریدار کہاں ہے​
​پھر روگ لگایا ہے مرے دل کو کسی نے​
اے چارہ گرِ خاطرِ بیمار کہاں ہے​
​پھر بر سرِ تخریب ہے اک جلوۂ کافر​
اے کعبۂ حکمت کے نگہ دار کہاں ہے​
​ہنگامہ ہے پھر دل میں بپا سود و زیاں کا​
اے تجربۂ اندک و بسیار کہاں ہے​
​پھر عشق کے خورشید کی سر پر ہے کڑی دھوپ​
اے عقل، ترا سایۂ دیوار کہاں ہے​
​پھر مائلِ دریوزہ ہے خود داریِ شاعر​
اے جزر و مدِ غیرتِ فنکار کہاں ہے​
​پھر چرخِ تفکر پہ ہیں زلفوں کی گھٹائیں​
اے فاتحِ اقلیمِ شبِ تار کہاں ہے​
​پھر خواب کے گرداب میں غلطاں ہے دلِ زار​
اے کشتیِ اندیشۂ بیدار کہاں ہے​
​راتوں کے اندھیروں میں ہے پھر اشک فشانی​
اے روشنیِ طبعِ گہربار کہاں ہے​
​ادراک سے پھر عشق بغاوت پہ ہے طیار​
اے فکر کی چلتی ہوئی تلوار کہاں ہے​
​پایل کے کھنکنے میں ہے پھر دعوتِ زنجیر​
اے بربطِ اطلاق کی جھنکار کہاں ہے​
​پھر خون میں غلطیدہ ہے زیرِ لب و رخسار​
اے قاطعِ زہرِ لب و رخسار کہاں ہے​
​آوارہ ہے پھر دشت و بیاباں میں دلِ جوش​
اے تمکنتِ گوشۂ افکار کہاں ہے​
اشعار کی تقطیع
تبصرے