کلام شاعر قسم
یہ دُنیا ذہن کی بازی گری معلُوم ہوتی ہے جوش ملیح آبادی غزل
معترض فرشتوں کی یاد دہانی جوش ملیح آبادی نظم
حضرت انسان علامہ اقبال نظم
متاعِ بے بہا ہے درد و سوزِ آرزو مندی​ علامہ اقبال غزل
ستم سکھلائے گا رسمِ وفا، ایسے نہیں ہوتا فیض احمد فیض غزل
اسدؔ! یہ عجز و بے سامانئِ فرعون توَام ہے مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
جراحت تحفہ، الماس ارمغاں، داغِ جگر ہدیہ مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
نہ لیوے گر خسِ جَوہر طراوت سبزۂ خط سے مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
ستم کش مصلحت سے ہوں کہ خوباں تجھ پہ عاشق ہیں مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
جنوں کی دست گیری کس سے ہو گر ہو نہ عریانی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
صفائے حیرتِ آئینہ ہے سامانِ زنگ آخر مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
لرزتا ہے مرا دل زحمتِ مہرِ درخشاں پر مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
بہ رہنِ شرم ہے با وصفِ شوخی اہتمام اس کا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
لطافت بے کثافت جلوہ پیدا کر نہیں سکتی مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
بساطِ عجز میں تھا ایک دل یک قطرہ خوں وہ بھی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
مری ہستی فضائے حیرت آبادِ تمنّا ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
غمِ دنیا سے گر پائی بھی فرصت سر اٹھانے کی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
کہوں کیا رنگ اس گل کا، اہا ہا ہا اہا ہا ہا بہادر شاہ ظفر غزل
فنا کو عشق ہے بے مقصداں حیرت پرستاراں مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نہ حیرت چشمِ ساقی کی، نہ صحبت دورِ ساغر کی مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
ہجومِ نالہ ، حیرت عاجزِ عرضِ یک افغاں ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
سیاہی جیسے گر جاوے دمِ تحریر کاغذ پر مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
لبِ عیسیٰ کی جنبش کرتی ہے گہوارہ جنبانی مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
کبھی نیکی بھی اس کے جی میں ، گر آ جائے ہے ، مجھ سے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
حضورِ شاہ میں اہلِ سخن کی آزمائش ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
قفس میں ہوں گر اچّھا بھی نہ جانیں میرے شیون کو مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
حسد سے دل اگر افسردہ ہے، گرمِ تماشا ہو مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
سکوت و خامشی اظہارِ حالِ بے زبانی ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نمائش پردہ دارِ طرز بیدادِ تغافل ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نسیمِ صبح جب کنعاں میں بوئے پیرَہن لائی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
بتائیں ہم تمہارے عارض و کاکُل کو کیا سمجھے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
طائرِ دل مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
گئے وہ دن کہ نا دانستہ غیروں کی وفا داری مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
خطر ہے رشتۂ الفت رگِ گردن نہ ہو جائے مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
تپش سے میری ، وقفِ کشمکش ، ہر تارِ بستر ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نہیں ہے زخم کوئی بخیے کے درخُور مرے تن میں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
قیامت ہے کہ سن لیلیٰ کا دشتِ قیس میں آنا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
پئے نذرِ کرم تحفہ ہے 'شرمِ نا رسائی' کا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
اسدؔ ہم وہ جنوں جولاں گدائے بے سر و پا ہیں مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
تغافل دوست ہوں میرا دماغِ عجز عالی ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ہجومِ غم سے یاں تک سر نگونی مجھ کو حاصل ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نکوہش ہے سزا فریادئ بیدادِ دل بر کی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
جنوں تہمت کشِ تسکیں نہ ہو گر شادمانی کی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نہ وہ راتیں نہ وہ باتیں نہ وہ قصّہ کہانی ہے غلام ہمدانی مصحفی غزل
سراپا رہنِ عشق و نا گزیرِ الفتِ ہستی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نہ ہوگا "یک بیاباں ماندگی" سے ذوق کم میرا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ستائش گر ہے زاہد ، اس قدر جس باغِ رضواں کا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
شمارِ سبحہ،" مرغوبِ بتِ مشکل" پسند آیا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل