کلام شاعر قسم
صبحِ آزادی فیض احمد فیض نظم
کہاں کے نام و نسب علم کیا فضیلت کیا افتخار عارف غزل
نہ انتظار کی لذت نہ آرزو کی تھکن احمد فراز غزل
وہی پرند کہ کل گوشہ گیر ایسا تھا پروین شاکر غزل
اتفاق اختر الایمان نظم
بنتِ لمحات اختر الایمان نظم
یہاں سے شہر کو دیکھو تو حلقہ در حلقہ فیض احمد فیض غزل
لہو کا سراغ​ فیض احمد فیض نظم
شرف کے شہر میں ہر بام و در حسینؑ کا ہے افتخار عارف نظم
گلوں میں رنگ بھرے، بادِ نو بہار چلے فیض احمد فیض غزل
بہ نالۂ دلِ دل بستگی فراہم کر مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
رُخِ نگار سے ہے سوزِ جاودانیِ شمع مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
حریفِ مطلبِ مشکل نہیں فسونِ نیاز مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
بلا سے ہیں جو یہ پیشِ نظر در و دیوار مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ہلاکِ بے خبری نغمۂ وجود و عدم مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
نفَس نہ انجمنِ آرزو سے باہر کھینچ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
گئی وہ بات کہ ہو گفتگو تو کیوں کر ہو مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
شبِ وصال میں مونس گیا ہے بَن تکیہ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
گلہ ہے شوق کو دل میں بھی تنگئ جا کا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نویدِ امن ہے بیدادِ دوست جاں کے لئے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
صبا لگا وہ طمانچہ طرف سے بلبل کے مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
خموشیوں میں تماشا ادا نکلتی ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
بہت سہی غمِ گیتی، شراب کم کیا ہے؟ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
کہوں جو حال تو کہتے ہو "مدعا کہیے " مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
زبسکہ مشقِ تماشا جنوں علامت ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ملی نہ وسعتِ جولان یک جنوں ہم کو مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
وفا جفا کی طلب گار ہوتی آئی ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نہ پوچھ حال اس انداز اس عتاب کے ساتھ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
کرم ہی کچھ سببِ لطف و التفات نہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
خزینہ دارِ محبت ہوئی ہوائے چمن مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
متفرقات مرزا اسد اللہ خان غالب نظم
شریکِ غالبؔ مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
قطعہ تاریخ مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
بیسنی روٹی مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
سلام مرزا اسد اللہ خان غالب نظم
دیا ہے دل اگر اُس کو ، بشر ہے ، کیا کہیے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
کرے ہے بادہ ، ترے لب سے ، کسبِ رنگِ فروغ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نہ پُوچھ نسخۂ مرہم جراحتِ دل کا مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
وہ آ کے ، خواب میں ، تسکینِ اضطراب تو دے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
مزے جہان کے اپنی نظر میں خاک نہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
زمانہ سخت کم آزار ہے، بہ جانِ اسدؔ مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
نہیں کہ مجھ کو قیامت کا اعتقاد نہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
یہ ہم جو ہجر میں دیوار و در کو دیکھتے ہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
جو مثلِ دوست، عدو کو بھی سرفراز کرے​ جوش ملیح آبادی غزل
مہیب سناٹا جوش ملیح آبادی نظم
نفَس نہ انجمنِ آرزو سے باہر کھینچ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل