کلام شاعر قسم
گفتگو اچھی لگی ذوقِ نظر اچھا لگا احمد فراز غزل
پھر چراغِ لالہ سے روشن ہوئے کوہ و دمن علامہ اقبال غزل
غم نہیں ہوتا ہے آزادوں کو بیش از یک نفس مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
زخم پر چھڑکیں کہاں طفلانِ بے پروا نمک مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
جادۂ رہ خُور کو وقتِ شام ہے تارِ شعاع مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
اے اسدؔ ہم خود اسیرِ رنگ و بوئے باغ ہیں مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
غیر یوں کرتا ہے میری پرسش اس کے ہجر میں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
آمدِ خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
دود کو آج اس کے ماتم میں سیہ پوشی ہوئی مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیرے، دل بے تاب تھا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
عیب کا دریافت کرنا، ہے ہنر مندی اسدؔ مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
شکوۂ یاراں غبارِ دل میں پنہاں کر دیا مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
درد سے میرے ہے تجھ کو بے قراری ہائے ہائے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
چشمِ خوباں خامشی میں بھی نوا پرداز ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
سادگی پر اس کی، مر جانے کی حسرت دل میں ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
دیکھنا قسمت کہ آپ اپنے پہ رشک آ جائے ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
رحم کر ظالم کہ کیا بودِ چراغِ کشتہ ہے مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
ایک جا حرفِ وفا لکّھا تھا، سو* بھی مٹ گیا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
رشک کہتا ہے کہ اس کا غیر سے اخلاص حیف! مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
شب کہ وہ مجلس فروزِ خلوتِ ناموس تھا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
قطرۂ مے بس کہ حیرت سے نفَس پرور ہوا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
گر نہ ‘اندوہِ شبِ فرقت ‘بیاں ہو جائے گا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
مستعدِّ قتلِ یک عالم ہے جلادِ فلک مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
ہم کہ ٹہرے اجنبی اتنی مداراتوں کے بعد فیض احمد فیض غزل
آمدِ سیلابِ طوفانِ صدائے آب ہے مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
کوہ کے ہوں بارِ خاطر گر صدا ہو جائیے مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
حسنِ بے پروا خریدارِ متاعِ جلوہ ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
عرضِ نازِ شوخیٔ دنداں برائے خندہ ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نشہ ہا شادابِ رنگ و ساز ہا مستِ طرب مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
لاغر اتنا ہوں کہ گر تو بزم میں جا دے مجھے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
یاد ہے شادی میں بھی ، ہنگامۂ "یا رب" ، مجھے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
رہیے اب ایسی جگہ چل کر جہاں کوئی نہ ہو مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نیم رنگی جلوہ ہے بزمِ تجلی رازِ دوست مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
بسکہ حیرت سے ز پا افتادہِ زنہار ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ہم زباں آیا نظر فکرِ سخن میں تو مجھے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ضبط سے مطلب بجز وارستگی دیگر نہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
صاف ہے ازبسکہ عکسِ گل سے گلزارِ چمن مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
بسکہ ہیں بدمستِ بشکن بشکنِ میخانہ ہم مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
کس کی برقِ شوخیِ رفتار کا دلدادہ ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ہم سے خوبانِ جہاں پہلو تہی کرتے رہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
حسنِ بے پروا گرفتارِ خود آرائی نہ ہو مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
بدتر از ویرانہ ہے فصلِ خزاں میں صحنِ باغ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ایک اہلِ درد نے سنسان جو دیکھا قفس مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
سہل تھا مُسہل ولے یہ سخت مُشکل آ پڑی مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
تضمین بر غزل بہادر شاہ ظفر مرزا اسد اللہ خان غالب نظم
کیوں نہ ہو چشمِ بتاں محوِ تغافل ، کیوں نہ ہو؟ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
چاک کی خواہش ، اگر وحشت بہ عریانی کرے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
سب کہاں؟ کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گئیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
دل لگا کر لگ گیا اُن کو بھی تنہا بیٹھنا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ہو گئی ہے غیر کی شیریں بیانی کارگر مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
برشکالِ گریۂ عاشق ہے دیکھا چاہیے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ہم سے کھل جاؤ بوَقتِ مے پرستی ایک دن مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
آبرو کیا خاک اُس گُل کی۔ کہ گلشن میں نہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
پا بہ دامن ہو رہا ہوں بسکہ میں صحرا نورد مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
دوست غم خواری میں میری سعی فرمائیں گے کیا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
شب خمارِ شوقِ ساقی رستخیز اندازہ تھا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نالۂ دل میں شب اندازِ اثر نایاب تھا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
سب کہاں کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گئیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
شب کہ برقِ سوزِ دل سے زہرۂ ابر آب تھا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
بزمِ شاہنشاہ میں اشعار کا دفتر کھلا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
دل مرا سوزِ نہاں سے بے محابا جل گیا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل