کلام شاعر قسم
نکلے چشمہ جو کوئی جوشِ زناں پانی کا میر تقی میر غزل
آدمی مصطفیٰ زیدی نظم
وہ تو پتھر پہ بھی گزرے نہ خدا ہونے تک احمد فراز غزل
عذر آنے میں بھی ہے اور بلاتے بھی نہیں داغ دہلوی غزل
مُوئے مِژگاں سے تِرے سینکڑوں مرجاتے ہیں امیر مینائی غزل
تنہائی فیض احمد فیض نظم
ہم کہ منت کشِ صیاد نہیں ہونے کے احمد فراز غزل
مرحلے شوق کے دُشوار ہُوا کرتے ہیں محسن نقوی غزل
عشق تو ایک کرشمہ ہے فسوں ہے یوں ہے احمد فراز غزل
بے تعلقی اختر الایمان نظم
فرشِ نومیدیِ دیدار فیض احمد فیض نظم
جرسِ گُل کی صدا فیض احمد فیض نظم
یوں سجا چاند کہ جھلکا ترے انداز کا رنگ فیض احمد فیض غزل
گل ہوئی جاتی ہے افسردہ سلگتی ہوئی شام فیض احمد فیض نظم
آج اک حرف کو پھر ڈھونڈتا پھرتا ہے خیال فیض احمد فیض نظم
میں اُسے واقفِ الفت نہ کروں ن م راشد نظم
رات یوں دل میں تری کھوئی ہوئی یاد آئی فیض احمد فیض نظم
کیا مصیبت زدہ دل مائلِ آزار نہ تھا میر تقی میر غزل
جی میں ہے یادِ رخ و زلفِ سیہ فام بہت میر تقی میر غزل
رفعت (سانیٹ) ن م راشد نظم
آپ نے مَسَّنیَ الضُّرُّ کہا ہے تو سہی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
مانعِ دشت نوردی کوئی تدبیر نہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
آہ کو چاہیے اِک عُمر اثر ہونے تک مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
مُژدہ ، اے ذَوقِ اسیری ! کہ نظر آتا ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
گل کھلے غنچے چٹکنے لگے اور صبح ہوئی مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
وسعتِ سعیِ کرم دیکھ کہ سر تا سرِ خاک مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
حسن غمزے کی کشاکش سے چھٹا میرے بعد مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
پھر ہوا وقت کہ ہو بال کُشا موجِ شراب مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
پھر وہ سوئے چمن آتا ہے خدا خیر کرے مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
عشرتِ قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
گرمِ فریاد رکھا شکلِ نہالی نے مجھے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
وہ میری چینِ جبیں سے غمِ پنہاں سمجھا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
میں ہوں مشتاقِ جفا، مجھ پہ جفا اور سہی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
لطفِ نظارۂ قاتل دمِ بسمل آئے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
باغ پا کر خفقانی یہ ڈراتا ہے مجھے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ابر روتا ہے کہ بزمِ طرب آمادہ کرو مرزا اسد اللہ خان غالب شعر
میر کے شعر کا احوال کہوں کیا غالبؔ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
اپنا احوالِ دلِ زار کہوں یا نہ کہوں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
دعوۂ عشقِ بتاں سے بہ گلستاں گل و صبح مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
یونہی افزائشِ وحشت کے جو ساماں ہوں گے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
وضعِ نیرنگیِ آفاق نے مارا ہم کو مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نالے دل کھول کے دو چار کروں یا نہ کروں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
آفت آہنگ ہے کچھ نالۂ بلبل ورنہ مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
در مدح ڈلی مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
گزارشِ غالبؔ مرزا اسد اللہ خان غالب قطعہ
خوش ہو اَے بخت کہ ہے آج تِرے سر سہرا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نکتہ چیں ہے ، غمِ دل اس کو سنائے نہ بنے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ہر قدم دوریٔ منزل ہے نمایاں مجھ سے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نقشِ نازِ بتِ طناز بہ آغوشِ رقیب مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نالہ جُز حسنِ طلب، اے ستم ایجاد نہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
ذکر میرا بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
مہرباں ہو کے بلا لو مجھے، چاہو جس وقت مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
کی وفا ہم سے تو غیر اس کو جفا کہتے ہیں مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
شکوے کے نام سے بے مہر خفا ہوتا ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
نہ ہوئی گر مرے مرنے سے تسلی نہ سہی مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
حسنِ مہ گرچہ بہ ہنگامِ کمال اچھا ہے مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
آج کی شب تو کسی طور گُزر جائے گی پروین شاکر نظم
درخورِ قہر و غضب جب کوئی ہم سا نہ ہوا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
بسکہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
حسرتِ جلوہِ دیدار لئے پھرتی ہے خواجہ حیدر علی آتش غزل
دہر میں نقشِ وفا وجہِ تسلی نہ ہوا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل
شوق، ہر رنگ رقیبِ سر و ساماں نکلا مرزا اسد اللہ خان غالب غزل